”میری کفن پر اللہ کے رسول ﷺ کا پسینہ لگادینا “کیا آپ جانتے ہیں یہ عظیم خاتون کون تھیں جو رسول اللہ ﷺ کا پسینہ خوشبویات میں ملا لیا کرتی تھیں .انہوں نے پھر ایسی آخری وصیت بھی کی کہ جس سے عشق نبیﷺ کی گراں قدر مثال قائم ہوگئی

”میری کفن پر اللہ کے رسول ﷺ کا پسینہ لگادینا “کیا آپ جانتے ہیں یہ عظیم خاتون ...
”میری کفن پر اللہ کے رسول ﷺ کا پسینہ لگادینا “کیا آپ جانتے ہیں یہ عظیم خاتون کون تھیں جو رسول اللہ ﷺ کا پسینہ خوشبویات میں ملا لیا کرتی تھیں .انہوں نے پھر ایسی آخری وصیت بھی کی کہ جس سے عشق نبیﷺ کی گراں قدر مثال قائم ہوگئی

  

اسلامی تاریخ میں سیدہ ام سلیم بنت ملحان کا نام بڑا معروف ہے۔آپؓ انتہائی بہادر،جراتمند،عادل اور رسول اللہ ﷺ سے بے پناہ محبت کرنے والی خاتون تھیں ۔ یہ حضرت انس بن مالکؓ کی والدہ اور مشہور صحابی حضرت ابو طلحہ انصاریؓ کی اہلیہ تھیں ۔ اللہ کے رسول ﷺ سے بے پناہ محبت اور احترام کا رشتہ تھا۔ قدیم الاسلام تھیں۔ پہلے خاوند مالک بن نضر نے اسلام قبول کرنے سے انکار کر دیا۔ وہ شام کی طرف نکل گیا اور وہیں حالت کفر میں مرگیا ۔ ام سلیم نے اپنے ننھے سے بیٹے انسؓ کو شروع ہی سے اسلام اور اللہ کے رسول ﷺ کی محبت میں طاق کر دیا۔ نہایت سمجھدار ، مدبر اور بہادر خاتوں تھیں۔

سیرت نگاروں نے لکھا ہے کہ اللہ کے رسول ﷺ سے ان کی والدہ کا غالباً رضاعی رشتہ تھا۔ اس وجہ سے وہ آپﷺ سے پردہ نہیں کرتی تھیں۔ آپﷺ بعض اوقات ان کے گھر تشریف لے جاتے اور قیلولہ فرماتے ۔ایک بار چارپائی پر چمڑے کا ٹکڑابچاہوا تھا۔ آپﷺ کو پسینہ آیا تو چمڑے میں جذب نہ ہوا۔ ام سلیمؓ نے موقع غنیمت جانا اور آپﷺ کے پسینے کو ایک چھوٹی سی بوتل میں جمع کر لیا۔ اللہ کے رسول ﷺ نے دیکھا تو دریافت فرمایا” ام سلیم یہ کیا کرہی ہو ؟“

کہنے لگیں ”یارسول اللہﷺ آپ کا مبارک پسینہ ہے ، میں اسے دوسری خوشبوﺅں میں شامل کر لیتی ہوں“ فرماتی تھیں” آپﷺ کا پسینہ بہترین خوشبو ہے“ ام سلیمؓ نے اپنے بیٹے انس بن مالک ؓ کو وصیت کی کہ میری وفات کے بعد میری کفن پر اللہ کے رسول ﷺ کا پسینہ لگا دینا ، چنانچہ انہوں نے اپنی والدہ کی وصیت پر عمل کیا ۔

مزید :

روشن کرنیں -