کراچی ،سی آئی اے سینٹر صدر سے خطرناک ملزم فرار ہوگیا

کراچی ،سی آئی اے سینٹر صدر سے خطرناک ملزم فرار ہوگیا

  

کراچی(کرائم رپورٹر)سی آئی اے سینٹر صدر سے خطرناک ڈکیت پولیس کو چکمہ دے کر فرار ہوگیا ،جس وقت ملزم فرار ہوا سینٹر سے فائرنگ کی آوازیں بھی آئیں،ملزم کو رینجرز نے ملزم کو مچھر کالونی سے گرفتارکرکے ایس آئی یو کے حوالے کیا تھا ، تفصیلات کے مطابق گزشتہ شب سی آئی اے سینٹر صدر سے ڈکیتی اور منشیات فروشی کے الزام میں ملوث ملزم ایاز فرار ہوگیا تھا ،جسے رینجرز نے مچھر کالونی سے گرفتار کرکے ایس آئی یو کے حوالے کیا تھا م، ایس ایس پی ایس آئی یو پیر فرید سرہندی کے مطابق ملزم نے طبیعت خراب ہونے کا کہا اور بتایا کہ اس کا دم گھٹ رہا ہے ،پولیس اہلکاروں نے اس کو لاک اپ سے باہر بٹھایا ،جہاں سے وہ فرار ہوا ، جبکہ زرائع کے مطابق ملزم یاسر سے ملنے کے لیے ایک ملاقاتی آیا تھا جو ملزم کے لیے کھانے کا ٹفن لایا تھا ،مبینہ طور پر ٹفن میں کھانے کی جگہ اسلحہ تھا ،پولیس نے ٹفن کو چیک نہیں کیا ،ملزم نے فرار ہوتے وقت مزاحمت کرنے پر کانسٹیبل جاوید کو ٹی ٹی کا بٹ مار کر زخمی کیا تھا ،زرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ ایس آئی یو صدر سے فائرنگ کی آوازیں بھی سنی گئیں ،ملزم 47لاکھ کی ڈکیتی کے علاوہ منشیات فروشی سمیت سنگین وارداتوں میں مطلوب تھا،ملزم کو دو روز قبل رینجرز نے گرفتار کرکے پولیس کے حوالے کیا تھا ،ایس آئی یو نے ملزم کے ہمراہ اس کے دو ساتھی بھی گرفتار کیے تھے تاہم ان کی گرفتاری ظاہر نہیں کی تھی ،ملزم نے فرار ہوتے وقت مزاحمت کرنے پر کانسٹیبل جاوید کو ٹی ٹی کا بٹ مار کر زخمی کیا تھا ڈی آئی جی سی آئی نے غفلت برتنے پر سب انسپکٹر ایس آئی او اور کانسٹیبل کو معطل کردیا ،آئی جی سندھ نے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے ڈی آئی جی سی آئی اے کو واقعہ کی تحقیقات کا حکم دیا ہے ۔انہوں نے ہدایت جاری کی ہیں کہ فرار ہونے والے ملزم کی گرفتاری کے لیے ضلعی اور تھانہ جات کی سطح پر فوری نوعت کے اقدامات اٹھائے جائیں ،اور اس ضمن میں تمام تر روابط کو ہر سطح پر یقینی بنایا جائے ۔

مزید :

رائے -راولپنڈی صفحہ آخر -