5اہم برآمدی شعبوں کے لئے ٹیکس سہولت ختم نہ کی جائے‘ ایف پی سی سی آئی

5اہم برآمدی شعبوں کے لئے ٹیکس سہولت ختم نہ کی جائے‘ ایف پی سی سی آئی

  

کراچی(اکنامک رپورٹر) فیڈریشن آف پاکستان چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈ سٹری کے صدرانجینئر دارو خان اچکز ئی، سابق صدر ایف پی سی سی آئی ایس ایم منیر، سابق صدر ایف پی سی سی آئی افتخار علی ملک نے آنے واے بجٹ میں پانچ اہم تر ین برآمدی شعبو ں پر زیروریٹ سہولت ختم کی قیا س آرائیوں پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ پا نچ اہم برآمدی شعبو ں جیسے ٹیکسٹائل، چمڑا، قا لین، جراحی آلات اور کھیلو ں کے سامان پر زیروریٹ سہولت ختم کر نے سے پاکستان کی برآمدات میں مز ید کمی آئے گی جو پہلے ہی مشکلا ت کا شکا رہیں یہ پا نچ شعبے پا کستان کی برآمدا ت میں ستر فیصدحصہ ڈالتے کرتے ہیں۔ اس کے علاوہ زر مبا دلہ کمانے میں بھی ان کا نما یا ں حصہ شا مل ہے اسی طرح ملک کے ہنرمند اور غیر ہنر مند لو گو ں کو روزگار فراہم کر نے میں ان پا نچ شعبو ں کا اہم کردار ہے۔ انہوں نے کہاکہ بر آمد کنند گان نے 300بلین کے ریفنڈزپہلے ہی FBRکے پاس زیر التوا ہیں جو کہ سر ما یہ کاری liquidity crunch اور نئی سر مایہ کاری کی راہ میں ایک بہت بڑ ی رکا وٹ ہے۔ اس کے علاوہ غیر یقینی معا شی ما حول سے سر ما یہ کا ری سے گر یز کر رہے ہیں اس کے ساتھ ساتھ روپے کی قدر میں پچھلے سال کے دوران 30فیصد کمی سے پاکستانی برآمد ات پر کو ئی مثبت اثرات مر تب نہیں ہو ئے۔ انہو ں نے مزید کہاکہ زیر و رٹیڈ کی سہو لت کتم ہو نے سے کا روباری لا گت بڑ ھے گی جیسا کہ میں 17فیصد سیلز ٹیکس اور بھا ری یو ٹیلیٹی لا گت سے گی عالمی منڈ ی میں پاکستا ن کی برآمدات کو پہلے ہی علاقا ئی ممالک سے سخت مقا بلے کا سامنا ہے کیونکہ علاقا ئی ممالک کی حکومتوں نے اپنے بر آمدات کو بہت سے سہو لیات فرا ہم کی ہوئی ہیں۔ انہوں نے کہاکہ حکومت کو چا یئے کہ وہ اپنی آمدنی بڑھانے کے لیے نئے ذرائع تلاش کر نے کہ برآمدات کو نقصان پہنطچائے جو کہ پہلے ہی کمی کا شکا ر ہے۔ انہوں نے مزید کہاکہ حکومت کو چا یئے کہ وہ صنعتکا ری کو فر وغ دے خاص طور پر زراعت اور ویلیو ایڈیڈصنعتیں تا کہ پاکستان کی برآمدات بڑ ھیں۔

مزید :

کامرس -