ایشیا کپ کرکٹ ٹورنامنٹ کی میزبانی کا اعزاز

ایشیا کپ کرکٹ ٹورنامنٹ کی میزبانی کا اعزاز

  

کھیلوں خصوصاًکرکٹ کے شائقین کو مبارک کہ ملک کے اندر ٹیسٹ کرکٹ اور مقابلوں کے در کھلنے کا عمل شروع ہونے والا ہے۔سنگاپور میں ہونے والی ایشین کرکٹ کونسل نے یہ خوش آئند فیصلہ کیا کہ ایشیا کپ کرکٹ ٹورنامنٹ کی میزبانی پاکستان کرے گا۔ یہ مقابلے اگلے سال ستمبر میں ہوں گے،اس کے بعد اگلے ماہ اکتوبر میں عالمی ٹی20- کرکٹ ٹورنامنٹ آسٹریلیا میں ہو گا، پاکستان میں ایشین ٹورنامنٹ بھی ٹی20- طرز پر ہو گا،اِس سلسلے میں جو اہم پیش رفت ہے وہ یہ کہ ایشین کرکٹ کونسل کے اجلاس میں پاکستان کے علاوہ بھارت اور سری لنکا کے اراکین بھی موجود تھے اور انہی کی موجودگی میں میزبانی کا فیصلہ ہوا،اس سے یہی تاثر ملتا ہے کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان کشیدگی کے باعث کرکٹ میچوں کا جو سلسلہ رُکا ہوا تھا وہ اب اس حد تک بحال ہو گا کہ ایشین ٹورنامنٹ پاکستان میں ہو گا اور بھارت کے وفد نے بھی رضا مندی ظاہر کی ہے۔دوسری اطلاع یہ بھی مثبت ہے کہ پاکستان اور سری لنکا اِس امر پر رضا مند ہو گئے ہیں کہ سری لنکن سیکیورٹی حکام مطمئن ہوئے تو پاکستان کی میزبانی میں سری لنکا کرکٹ ٹیم کا دورہ بھی اپنے ملک میں ہو گا اور کسی غیر جانبدار وینیو کی ضرورت نہیں ہو گی۔ یہ اطلاعات اپنی جگہ پر بہت مبارک ہیں کہ کھیلنے والے اور کھیل دیکھنے والے شائقین کھیلوں کو نہ صرف سیاست سے پاک اور دور رکھنا چاہتے ہیں، بلکہ کھیل بہتر تعلقات کا ذریعہ بھی ہوتے ہیں۔ بدقسمتی سے لاہور میں سری لنکن ٹیم پر دہشت گردوں کے حملے سے ہمیں بہت نقصان ہوا کہ دُنیا بھر سے کھیل کی ٹیمیں بھی ملک میں آنے سے انکار کرتی رہی ہیں تاہم کچھ عرصہ سے دہشت گردی کے خلاف کامیاب جنگ اور جدوجہد سے امن و امان کی حالت اس حد تک بہتر ہوئی کہ کئی ممالک سے سیکیورٹی ٹیموں نے حالات کو موافق قرار دیا اور ایشیا کپ ٹی20- ٹورنامنٹ کی میزبانی بھی اسی حوالے سے ہے اور کرکٹ کونسل کے اجلاس میں بھارتی وفد نے بھی اثبات میں رائے دی ہے تو یقین کرنا چاہئے کہ بھارتی ٹیم بھی آئے گی کہ یہ مقابلے ایشین ٹورنامنٹ کے حوالے سے ہیں،اس سے قبل بھارت کی ٹیم چیمپئن ٹرافی میں کھیل چکی ہے جو برطانیہ میں ہوا تھا، یہ بھی یقین کرنا چاہئے کہ سری لنکا بورڈ کی سیکیورٹی بھی ٹیم یہاں آ کر مطمئن ہو کر جائے گی اور دو ٹیسٹ سیریز سمیت باقی میچ بھی ہو جائیں گے۔

مزید :

رائے -اداریہ -