شہباز دور میں سستی روٹی سکیم پر فراہم قرضوں کی تفصیل طلب

  شہباز دور میں سستی روٹی سکیم پر فراہم قرضوں کی تفصیل طلب

  

لاہور (نمائندہ خصو صی)پنجاب اسمبلی کی خصوصی کمیٹی نے پنجاب اسمبلی کی نئی عمارت کی تکمیل میں طویل تاخیر کی وجوہات، بنیادی لاگت میں کئی گنااضافہ اور ذمہ داروں کی نشاندہی پر مبنی تفصیلی رپورٹ طلب کر لی۔کمیٹی کا اجلاس دوبارہ صوبائی وزیر قانون، پارلیمانی امور و بلدیات راجہ بشارت کی زیر صدارت پنجاب اسمبلی منعقد ہوا جس میں صوبائی وزیر مواصلات آصف نکئی، وزیر پراسیکیوشن چوہدری ظہیرالدین سمیت اراکین پنجاب اسمبلی لتاسب ستی، خدیجہ فاروقی، زینب عمیراورمتعلقہ افسران بھی موجود تھے۔راجہ بشارت نے کہا کہ صوبہ بھرمیں پہلے سے جاری ترقیاتی منصوبوں کو 2009 کے بعد بلا جواز روکنا بدنیتی پر مبنی نظر آتا ہے۔انہوں نے محکمہ تعلیم، صنعت و تجارت اور مواصلات کو ہدایت کی کہ روکے گئے ایسے تمام منصوبوں کی فہرست اور وجوہات تحریری طور پرفراہم کریں۔انہوں نے افسوس کا اظہار کیا کہ سابقہ دور میں سستی روٹی سکیم کے تحت دیے گئے قرضے تا حال وصول نہیں کیے گئے، یہ پیسے قومی خزانے میں واپس آنے چاہیں لہذا محکمہ صنعت مکینیکل تندوروں کے لیے دیے گئے قرضوں کی تفصیل اور طے شدہ شرائط پر مبنی رپورٹ کمیٹی کو جمع کرائے۔وزیر قانون نے مزید کہا کہ ن لیگ کے دور میں جاری منصوبوں کو روک کر نئے منصوبے شروع کیے گئے جس سے سرکاری خزانے کو بھاری نقصان پہنچا ۔اس موقع پر ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل پنجاب شان گل نے وضاحت کی کہ مفاد عامہ کے جاری ترقیاتی منصوبوں کو قانونی طور پرنہیں روکا جا سکتالہٰذا روکے گئے تمام منصوبوں کے ذمہ داروں کے خلاف قانونی کارروائی کی جا سکتی ہے۔راجہ بشارت نے کہا کہ ذمہ داروں کو قانون کے شکنجے میں لانے کے لیے ن لیگ کی جانب سے روکے گئے جاری منصوبوں کی تفصیلی رپورٹ پنجاب اسمبلی میں پیش کی جائے گی۔

خصوصی کمیٹی اجلاس

مزید :

صفحہ آخر -