سٹاک مارکیٹ میں مسلسل مندی سے اربوں روپے ڈوب گئے،امیر العظیم

سٹاک مارکیٹ میں مسلسل مندی سے اربوں روپے ڈوب گئے،امیر العظیم

  

لاہور (نمائندہ خصوصی) سیکرٹری جنرل جماعت اسلامی پاکستان اور امیر جماعت اسلامی صوبہ وسطی پنجاب امیر العظیم نے کہا ہے کہ سٹاک مارکیٹ میں مسلسل مندی سے اربوں روپے ڈوب چکے ہیں۔ چیئرمین سٹاک ایکسچینج کا استعفیٰ اس بات کا ثبوت ہے کہ حالات پہلے سے زیادہ خراب ہوچکے ہیں۔ بجٹ سے پہلے ہی آئی ایم ایف کی شرائط پر عمل در آمد کرکے عوام کی زندگی اجیرن بنادی گئی ہے

حکومتی ناقص پالیسیوں کی وجہ سے غیر ملکی سرمایہ کارپاکستان آنے سے گھبراتے ہیں۔ جبکہ سٹاک ایکسچینج کی کارکردگی سے ان کے تحفظات میں مزید اضافہ ہوگیا ہے۔ ان خیالا ت کا اظہار انھوں نے گزشتہ روز مختلف عوامی وفود سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ انھوں نے کہا کہ معاشی مسائل دن بدن گھمبیر ہوتے چلے جارہے ہیں۔ موجودہ حکمرانوں کے طرز عمل اور ماضی کی حکومتوں کی کارکردگی میں کوئی فرق محسوس نہیں ہوتا۔ تبدیلی کے دعویداروں نے اپنے ہی لوگوں کے سر شرم سے جھکادیے ہیں۔ آئی ایم ایف کے پاس جانے کی بجائے خودکشی کوترجیح دینے والوں نے پوراملک ہی آئی ایم ایف کے حوالے کردیا، 9ماہ میں ہی قرضوں کے پہاڑ کھڑے کردیئے گئے ہیں۔ اس وقت ہر پاکستانی ایک لاکھ ساٹھ ہزار روپے کا مقروض ہوچکا ہے۔ خود مختاری اور خود انحصاری کا گلا گھونٹ دیا گیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ ڈالر نے تاریخ کے تمام ریکارڈ توڑ دیئے ہیں۔ پٹرولیم مصنوعات اور بجلی کے نرخ آسمان سے باتیں کررہے ہیں۔ عوام الناس کو ریلیف نام کی کوئی چیز میسر نہیں۔ آئندہ بجٹ میں مہنگائی کے تناسب سے ملازمین کی تنخواہوں میں اضافہ کیا جائے۔ ٹیکس نیٹ ورک کو منظم کرتے ہوئے نئے افراد کو شامل کیا جائے۔ 22 کروڑ کی آبادی میں صرف پندرہ لاکھ افراد ٹیکس ادا کرتے ہیں جو کہ تشویشناک امرہے۔ امیر العظیم نے مزید کہا کہ ملک اس وقت شدید معاشی دباؤ میں ہے۔ قومی مطالبہ ہے کہ حکمران آئی ایم ایف کے ساتھ طے پائی جانے والی تمام شرائط اور معاہدوں کو منظر عام پر لائیں۔ یہ عوام کا حق ہے کہ انھیں حقائق سے آگاہ کیا جائے۔ سودی معاشی نظام نے ملکی معیشت کوتباہی کے دہانے پر پہنچادیا ہے۔ اسلامی طرز معیشت اختیا رکرنے تک ملکی معیشت میں بہتری نہیں آسکتی۔

مزید :

میٹروپولیٹن 4 -