کورونا کے باعث 5ڈاکٹر ز اور پنجاب ماس ٹرانز ٹ اتھارٹی کے جنرل مینجر فنانس جاں بحق

  کورونا کے باعث 5ڈاکٹر ز اور پنجاب ماس ٹرانز ٹ اتھارٹی کے جنرل مینجر فنانس ...

  

شیخوپورہ،لاہور(بیورو رپورٹ، جنرل رپورٹر،مانیٹرنگ ڈیسک) کورونا وائرس س کے باعث پانچ ڈاکٹرز اورپنجاب ماس ٹرانزٹ اتھارٹی کے جنرل مینیجر فنانس آصف سہیل جاں بحق ہو گئے جاں بحق ڈاکٹرز میں سے دو کا تعلق لاہور، ایک کا گوجرانوالہ اور ایک ہنگو سے ہے۔ لاہور جنرل ہسپتال کے ایم ایس بھی وبائی مرض کا شکار ہوکر آئسولیشن میں چلے گئے ہیں۔تفصیل کے مطابق کورونا وائرس کیساتھ فرنٹ لائن پر لڑنے والے ڈاکٹرز خود ہی اس مرض کا شکار بن کر اپنی جانیں گنوا رہے ہیں۔ کورونا سے زندگی کی بازی ہارنے والے لاہور کے ڈاکٹرز کا نام ثناء فاطمہ اور سلمان طاہر ہیں۔ ڈاکٹر ثناء فاطمہ ایف سی پی ایس جبکہ سلمان طاہر ایم بی بی ایس فورتھ ایئر کے طالب علم تھے۔نجی لیبارٹری میں کام کرنے والی 39 سالہ سینئر ڈاکٹر ثناء فاطمہ 20 مئی سے نجی ہسپتال کے آئی سی یو میں زیر علاج تھیں جو جمعہ طبعیت بگڑنے کے باعث خالق حقیقی سے جا ملیں۔ وہ فاروق آباد کے معروف ماہر امراض چشم ڈاکٹر جمشید عالم کی بیٹی تھیں،ڈاکٹر ثناء فاطمہ تقریباًایک ماہ قبل اپنے علاج کی غرض سے سعودیہ سے وطن واپس آئی تھیں،واپسی پر انہوں نے اپنا کرونا ٹیسٹ کروایا جو منفی آیا جبکہ پندرہ روز قبل دوبارہ ٹیسٹ کروایا جو مثبت آگیادوسری جانب لاہور کے نجی میڈیکل کالج کے ایم بی بی ایس فورتھ ائیر کے طالبعلم سلمان طاہر کو تیز بخار کے باعث داخل کروایا گیا، مگر کورونا کا وائرل لوڈ زیادہ ہونے کے باعث 24 گھنٹوں میں ہی ان کی نجی ہسپتال کے آئی سی یو میں موت واقع ہوگئی۔ڈاکٹر سلمان طاہر کے والد پروفیسر طاہر سلیم نجی ہسپتال میں پیڈیاٹرک وارڈ کے انچارج جبکہ ان کی والدہ ڈاکٹر شبانہ نجی ہسپتال میں گائنالوجسٹ ہیں۔ادھر گوجرانوالہ کے ڈاکٹر نعیم اختر بھی کورونا وائرس کے باعث دم توڑ گئے ہیں۔ وہ لاہور کے سروسز ہسپتال میں زیر علاج تھے اور سوشل سیکیورٹی ہسپتال میں ڈیوٹی سرانجام دے رہے تھے۔ ڈاکٹر نعیم اختر ماہر نفسیات تھے۔ پی ایم اے گوجرانوالہ نے سینئر ڈاکٹر کی موت پر رنج وغم کا اظہار کرتے ہوئے یوم سیاہ منایا۔اسی طرح لاہور جنرل ہسپتال کے ایم ایس بھی کورونا کا شکار ہوکر آئسولیشن میں چلے گئے ہیں۔ ڈاکٹر محمود صلاح الدین کی جمعہ کو رپورٹ پازیٹو آئی تھی جس کے بعد انھیں ہوم آئسولیٹ کردیا گیا ہے۔خبریں ہیں کہ پشاور میں بھی کورونا وائرس میں مبتلا ایک ڈاکٹر نے دم توڑ دیا ہے۔ جاں بحق ڈاکٹر کا تعلق ہنگو کے نجی ہسپتال سے تھا۔جبکہ کوئٹہ کے بولان میڈیکل کمپلیکس کے ٹراما سینٹر کے انچارج ڈاکٹر زبیر خان کورونا وائرس کے خلاف فرنٹ لائن پر لڑتے ہوئے شہید ہوگئے۔ترجمان بی ایم سی کے مطابق ڈاکٹر زبیر خان کا کورونا وائرس کا ٹیسٹ چند روز قبل مثبت آیا تھا جس کے بعد وہ فاطمہ جناح اسپتال میں زیرعلاج تھے۔ڈاکٹر زبیر خان کو طبیعت زیادہ خراب ہونے پر شیخ زید اسپتال منتقل کیا گیا لیکن وہ جانبر نہ ہو سکے۔ڈاکٹر زبیر خان بولان میڈیکل کمپلیکس اور سول ہسپتال کوئٹہ میں مختلف عہدوں پر خدمات انجام دے چکے ہیں۔دریں اثناپنجاب ماس ٹرانزٹ اتھارٹی کے جنرل مینیجر فنانس آصف سہیل بھی کورونا وائرس سے انتقال کرگئے۔ آصف سہیل میں 6 روزقبل کورونا کی علامات ظاہر ہوئیں تو انہوں نے کورونا ٹیسٹ کروایا جس کا نتیجہ مثبت آیا۔محکمہ صحت نے بتایا کہ کورونا ٹیسٹ مثبت آنے پر آصف سہیل کو پاکستان لیور اینڈ کڈنی انسٹی ٹیوٹ منتقل کیا گیا جہاں ان کی حالت تشویشناک تھی اور وہ جانبر نہ ہوسکے۔

ڈاکٹرز جاں بحق

مزید :

صفحہ اول -