مہنگی بجلی صنعتی ترقی کی راہ میں رکاوٹ ہے: میاں نعمان کبیر

  مہنگی بجلی صنعتی ترقی کی راہ میں رکاوٹ ہے: میاں نعمان کبیر

  

لاہور(لیڈی رپورٹر)چیئرمین پاکستان انڈسٹریل اینڈ ٹریڈرز ایسوسی ایشنز فرنٹ (پیاف) میاں نعمان کبیر نے کہا ہے کہ صنعتی صارفین پر بجلی 1.5 سے 1.75 روپے مہنگی کر کے 162ارب روپے کا اضافی بوجھ ڈالنے کی تیاریاں تشویشناک ہیں۔ بجلی کی تقسیم کار کمپنیوں نے اپنے سہ ماہی ایڈ جسمنٹ کے لئے اضافہ کی درخواست دائر کی ہے، حکومت اسے فی الفور مسترد کرے۔بجلی مزید مہنگی ہونے سے اشیاء کی پیدواری لاگت میں اضافہ سے اشیاء مہنگی اور ملک میں مہنگائی میں ہوشربا اضافہ ہوگا حکومت نے پچھلے ۲ ماہ کے دوران پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں واضح کمی کی ہے مگر بجلی کی قیمتوں میں کمی نہیں کی۔ اب جبکہ پٹرولیم مصنوعات انتہائی کم ترین سطح پر آگئی ہیں لہٰذا حکومت پاکستان بھی پٹرولیم مصنوعات میں مزید کمی کے ساتھ ساتھ بجلی کی قیمتوں کو بھی کم کیا جائے۔کورونا وبا کی وجہ سے مہنگائی،کساد بازاری،بیروگاری سمیت کئی معاشی چیلنجز درپیش ہیں ان حالات میں بجلی کی قیمت کم کرنے کی بجائے اضافے کا جواز بالکل بھی نہیں ہے۔ پٹرولیم مصنوعات میں وقتاً فوقتاً اضافوں پر فی یونٹ بجلی کی قیمتوں میں ہوشربا اضافہ کیا جاتا رہا ہے جبکہ بجلی بلوں میں مختلف قسم کے ٹیکسز اس کے علاوہ ہیں جس سے بجلی کے نرخ خطے میں دیگر ممالک کی نسبت زیادہ ہیں اب جبکہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں انتہائی کم ترین سطح پر آ چکی ہیں اس لیے اسی تناسب سے صنعتی و کاروباری مقاصد کیلئے بجلی قیمتوں میں کمی کرکے عوام کو ر حقیقی معنوں میں ریلیف دیا جائے ۔نعمان کبیرنے کہا کہ صنعتی شعبہ میں دن رات بجلی استعمال ہوتی ہے.مہنگی بجلی صنعتی ترقی کی راہ میں رکاوٹ ہے بجلی مہنگی کرنے کے بعد بجلی بلوں میں عائد مختلف قسم کے ٹیکسوں کا خاتمہ کیا جائے جو بلوں کا 40فیصد بنتا ہے اور ان ناجائز ٹیکسوں سے عوام پر بجلی کے بل بوجھ بن چکے ہیں کیونکہ ایسے فیصلوں سے وقتی ریونیو تو حاصل ہوجاتا ہے لیکن مہنگی بجلی اور اشیاء کے باعث برآمدات میں کمی ہوگی جس سے تجارتی خسارہ میں اضافہ اور اور حکومتی زرمبادلہ کے ذخائر میں کمی سے حکومتی مشکلات بڑھیں گی اس لیے بجلی قیمتوں ہرگز نہ بڑھائی جائیں۔چیئرمین پیاف میاں نعمان کبیر نے سیئنر وائس چیئرمین ناصر حمید خان اور وائس چیئرمین پیاف جاوید اقبال صدیقی کے ہمراہ پریس ریلیز جاری کرتے ہوئے کہا کہ پٹرولیم مصنوعات میں اضافہ کو جواز بناکر اب تک کئے گئے فی یونٹ بجلی کے اضافوں کو واپس لے کر بجلی سستی کی جائے۔صنعتی مقاصد کیلئے بجلی کی قیمتوں میں کمی سے پیداواری لاگت میں کمی سے اشیاء سستی اورمہنگائی میں کمی ہوگی جس سے عوام کو ریلیف ملے گا۔

مزید :

کامرس -