احتساب کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ خود حکمران ہیں: سراج الحق

احتساب کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ خود حکمران ہیں: سراج الحق

  

لاہور(آئی این پی) امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق نے کہاہے کہ خوشحال لوگ اپنی خوشحالی کو محفوظ رکھنا چاہتے ہیں توانہیں غریبوں کوبھی زندہ رہنے کاحق دیناہوگا،ایسانظام قابل قبول نہیں جس میں غریب کامعاشی قتل ہواور امیروں کی دولت میں دن دگنااور رات چوگنا اضافہ ہوتا رہے،اسلام دولت کو چند ہاتھوں میں مرتکز رکھنے کی اجازت نہیں دیتا،پاکستان کا اصل مسئلہ وسائل کی کمی نہیں بلکہ وسائل کی غیرمنصفانہ تقسیم اوردولت کاچندہاتھوں میں ارتکاز ہے،اسلام دولت کی سرکولیشن کا حکم دیتا ہے،ملکی اقتدار پر قابض رہنے والوں نے اپنے سیاسی اور سرکاری منصبوں کاناجائز استعمال کرکے دولت سمیٹی اور اس میں مسلسل اضافہ کرتے رہے،حکومت کے پاس اب تک ایسا کوئی میکنزم نہیں جس سے لوٹی گئی قومی دولت واپس لائی جاسکے،جہاں لوٹنے والے خودحکومت میں بیٹھے ہوں وہاں کون کسی کا احتساب کرسکتا ہے؟ احتساب کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ خود حکمران ہیں۔منصورہ میں جے آئی کسان کے رہنماارسلان خان خاکوانی اور سیکرٹری اطلاعات قیصر شریف سے ملاقات کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ جماعت اسلامی یکساں احتساب اور ایسا معاشی نظام چاہتی ہے جو سود سے پاک ہو اور امیر اور غریب کو دولت کمانے کے یکساں مواقع دے سکے۔ جب تک منافع بخش اداروں اور کارخانوں کی پیدا وار میں مزدوروں اور زمین کی پیداوار میں کاشتکاروں اور کسانوں کو شریک نہیں کیا جاتا کسانوں اور مزدوروں کے حالات نہیں بدل سکتے،جاگیر دار کسانوں اور سرمایہ دار و صنعتکار مزدوروں کے خون پیسنے کی کمائی کھارہے ہیں،موجودہ معاشی نظام میں امیر خوشحال اور غریب کنگال ہورہا ہے۔انہوں نے کہا کہ عوام کے معاشی استحصال کے خاتمہ کیلئے انقلابی اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے جس میں سب سے پہلا کام آئینی تقاضوں کو پورا کرتے ہوئے ملک سے سودی معیشت کا خاتمہ اور زکوا ۃو عشر کے پاکیزہ معاشی نظام کا نفاذ ہے۔

سراج الحق

مزید :

صفحہ آخر -