جنوبی وزیرستان تحصیل میونسپل ایڈمنسٹریشن صرف کاغذی کاروائی تک محدود

جنوبی وزیرستان تحصیل میونسپل ایڈمنسٹریشن صرف کاغذی کاروائی تک محدود

  

ٹانک(نمائندہ خصوصی)جنوبی وزیرستان تحصیل میونسپل ایڈمنسٹریشن صرف کاغذی کاروائی تک محدود وانا، مکین، اور سراروغہ کے بازار گندگیوں کے ڈھیر میں تبدیل ضلع کے تینوں سب ڈویژن میں ٹی ایم اے کا نام و نشان تک نہیں، تفصیلات کے مطابق قبائلی ضلع جنوبی وزیرستان جوکہ تین سب ڈویژن وانا، لدھا، سرویکئی پر مشتمل ہے جن کی آبادی ایک ملین نفوس سے زیادہ ہے، فاٹا کا خیبر پختون خواہ میں ضم ہونے سے پہلے قبائلی علاقوں میں تحصیل مینوسپل ایڈمنسٹریشن کا کوئی وجود نہیں تھا لیکن خیبر پختون خواہ ضم ہونے کے بعد صوبائی حکومت نے دیگر محکموں کی طرح ہرقبائلی ضلع میں تحصیل مینوسپل ایڈمنسٹریشن کا قیام عمل میں لاکر باقاعدہ طور پر ہر سب ڈویژن کیلئے تحصیل میونسپل آفیسر کی تعیناتی عمل میں لانے کے ساتھ ساتھ بازاروں اور گھلی کوچوں کی صفائی ستھرائی کیلئے کروڑوں روپے کی جدید مشنری بھی ہر سب ڈویژن کو فراہم کی لیکن بدقسمتی سے کروڑوں روپے کی مشنری بغیر استعمال کیئے ڈپٹی کمشنر کمپاؤنڈ جنوبی وزیرستان میں کھڑے کھڑے زنگ آلود ہوکر تباہ اور برباد ہوکر ناکارہ ہورہی ہے، اور جنوبی وزیرستان کے گنجان آباد بازاروں میں تحصیل میونسپل ایڈمنسٹریشن کا اوپر تلے عملے کا کوئی وجود نہیں اور شہر کے گلی کوچے گندگیوں کے ڈیر میں تبدیل ہوکر رہ گئے ہیں جس سے نہ صرف روز بروز زہریلے مچھر اور دیگر کیڑے مکوڑے کی افزائش میں اضافہ ہورہا ہے بلکہ تعفن پھیلنے سے عوام طرح طرح کی بیماریوں میں مبتلا ہورہی ہے،لیکن افسوس کی بات یہ ہے کہ وزیرستان سے منتخب نمائندے اس اہم مسلہ پر بالکل خاموش تماشائی بن کر مجرمانہ خاموشی اختیار کی ہوئی ہے، موجود حالات میں ایک طرف عوام کورونا وائرس سے نبرد آزما ہے جبکہ دوسری جانب جنوبی وزیرستان کے گھلی کوچوں اور بازاروں میں لشمینیا اور دیگر زہریلے مچھروں نے عوام کی زندگیاں اجیرن بنا دی ہے جو جنوبی وزیرستان تحصیل میونسپل ایڈمنسٹریشنوں کی غفلت اور لاپرواہی کا واضح ثبوت ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -