اگنائٹ کا پاکستان ایگریکلچر ریسرچ کونسل کے ساتھ معاہدہ

اگنائٹ کا پاکستان ایگریکلچر ریسرچ کونسل کے ساتھ معاہدہ

  

اسلام آباد(پ ر) وزارتِ آئی ٹی اینڈ ٹیلی کام سے وابستہ کمپنی اگنائٹ نیشنل ٹیکنالوجی فنڈنے ڈیجیٹائزیشن اور جدت کو بروئے کار لاتے ہوئے ٹیکنالوجی پر مبنی سیلیوشنز کی مدد سے پائیدارزرعی پیداوار (زراعت، لائیوسٹاک و ایکواکلچر)، غذائی تحفظ، اور کسان کی مارکیٹ تک رسائی بڑھانے کے لیے پاکستان ایگریکلچر ریسرچ کونسل کے ساتھ فریم ورک کولیبوریشن معاہدہ کر لیا۔سی ای اواگنائٹ  عاصم شہر یار حسین اور سیکرٹری (کونسل)PARC  روشن زادہ نے ممبر آئی ٹی، وزارتِ آئی ٹی اینڈ ٹیلی کام  سید جنید امام اور چئیرمین PARC ڈاکٹر محمد عظیم خان کی موجودگی میں فریم ورک کولیبوریشن معاہدے پر دستخط کیے۔ فریم ورک کولیبوریشن معاہدے کا مقصد ڈیجیٹائزیشن اور جدت کو بروئے کار لاتے ہوئے ٹیکنالوجی پر مبنی سیلیوشنز کی مدد سے پا ئیدارزرعی پیداوار (زراعت، لائیوسٹاک و ایکواکلچر) کو فائدہ پہچانا،زرعی پیداواری صلاحیت کا فروغ اور کسانوں کی مارکیٹ تک رسائی بڑھاناہے۔چئیرمین PARC ڈاکٹر محمد عظیم خان نے اپنے خطاب PARC کے ٹیک پر مبنی اقدامات کے متعلق سامعین کو آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ زراعت پاکستان کی معیشت کا بنیادی حصہ ہے کیونکہ اسوقت یہ مجموعی طور پر جی ڈی پی کا 20% حصہ ہے اور روزگار کا ایک بڑا ذریعہ بھی ہے اس موقع پر سی ای اواگنائٹ جناب عاصم شہر یار حسین نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ زراعت میں جدت پو رے ویلیو چین کو کاٹتی ہے- فصل، جنگلات،ماہی گیری یا لائیو سٹاک کی پیداوارسے لیکر آدانوں کی مینجمنٹ اور منڈی تک رسائی تک۔انھوں نے کہا کہ اگنائٹ نے ٹیکنالوجی کی مداخلت کے ذریعے ان چیلنجوں کے حل کیلیے ہمیشہ مکمل سپورٹ کی ہے اور جدید سلیوشنز سے کسانوں کی پیداوار اور منافع کو بڑھانے اور مڈل مین کے کردار کو کم کرنے کی کوشش کی ہے۔انھوں نے بتایا کہ اگنائٹ نے گزشتہ سال FAO کے اشتراک سے Agrisurge Innovation Challenge کا انعقاد کیا تھاجسکے فاتحین کو اپریل2021 میں نقد انعامات سے نوازا گیا۔

مزید :

کامرس -