سوا کروڑ خواتین رجسٹرڈ ہی نہیں ہونگی تو شفاف انتخابات کیسے ہونگے؟الیکشن کمیشن

سوا کروڑ خواتین رجسٹرڈ ہی نہیں ہونگی تو شفاف انتخابات کیسے ہونگے؟الیکشن ...

  



اسلام آباد (این این آئی)سیکرٹری الیکشن کمیشن بابر یعقوب نے کہاہے کہ سوا کروڑ خواتین رجسٹرڈ ہی نہیں ہونگی تو شفاف الیکشن کیسے ہوگا؟خواتین کی رجسٹریشن یقینی بنانا سیاسی جماعتوں کی ذمہ داری ہے، سہولیات نہیں ہونگی تو خواتین اور معذور افراد ووٹ ڈالنے نہیں جائیں گے، امید ہے ممبرز کی تعیناتی کا مسئلہ حکومت اور اپوزیشن جلد حل کر لینگے، ایک صوبے میں دس ماہ سے بلدیاتی الیکشن پر حکم امتناع ہے،الیکشن کمیشن بلدیاتی الیکشن کیلئے پوری طرح تیار ہے۔ سیکرٹری الیکشن کمیشن بابر یعقوب نے انتخابی اصلاحات کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ الیکشن 2018 سے پہلے 43 لاکھ خواتین ووٹرز کا اندراج کیا گیا،خدشہ ہے کہ غیر رجسٹرڈ خواتین ووٹرز کی تعداد بڑھ نہ جائے۔انہوں نے کہاکہ خواتین ووٹرز کی رجسٹریشن کیلئے الیکشن کمیشن اور نادار مل کر کام کر رہے ہیں۔انہوں نے کہاکہ سیاسی جماعتوں کی جانب سے خواتین ووٹرز سے متعلق تعاون کا فقدان ہے۔ انہوں نے کہاکہ پہلی بار خواتین کو ووٹ ڈالنے سے روکنے والوں پر سختی کی گئی،شانگلہ میں دس فیصد سے کم خواتین ووٹ پول ہونے پر دوبارہ الیکشن کرایا گیا،فاٹا الیکشن میں خواتین ووٹرز نے بھرپور حصہ لیا جو سیاسی جماعتوں اور الیکشن کمیشن کی کامیابی ہے۔ سیکرٹری الیکشن کمیشن نے کہاکہ الیکشن ایکٹ 2017 کی تیاری کا حصہ رہا،تمام سیاسی جماعتوں نے ایکٹ کی تیاری میں بہترین کردار ادا کیا،الیکشن ایکٹ 2017 بھی حرف آخر نہیں اس میں بھی آپریشنل ایشوز موجود ہیں۔ انہوں نے کہاکہ الیکشن کمیشن کو ایکٹ میں خودمختار بنایا گیا ہے،حکومتی اداروں میں الیکشن کمیشن کی خودمختاری کو پسند نہیں کیا جاتا۔انہوں نے کہاکہ سیاسی جماعتوں کے تعاون سے اس مسئلے کو حل کرینگے،الیکشن 2018 میں ریٹرننگ افسران کیلئے ایک ہزار کمپیوٹر جاپانی حکومت نے دئیے۔ انہوں نے کہاکہ امید ہے ممبرز کی تعیناتی کا مسئلہ حکومت اور اپوزیشن جلد حل کر لینگے،مقامی حکومتوں کے الیکشن بھی نہیں ہو پا رہے۔ انہوں نے کہاکہ 15 دسمبر کو کنٹونمنٹ بورڈ کے الیکشن کی مدت ختم ہو رہی ہے۔ انہوں نے کہاکہ تین صوبوں اور کنٹونمنٹس میں بلدیاتی الیکشن چند ماہ میں ہونگے۔ 

الیکشن کمیشن

مزید : علاقائی