خیبرپختونخوا سمیت ملک بھر میں ڈیڑھ لاکھ افراد ایڈز میں مبتلا

خیبرپختونخوا سمیت ملک بھر میں ڈیڑھ لاکھ افراد ایڈز میں مبتلا

  



پشاور(سٹی رپورٹر)صوبہ خیبر پختونخوا سمیت ملک بھر میں طبی ماہرین کے سروے رپورٹ کے مطابق اس وقت ڈیڑھ لاکھ سے زائد افراد ایچ آئی وی ایڈزکے مرض میں مبتلاہیں جن میں صرف27ہزار رجسٹرڈ ہیں۔ خیبرپختونخوامیں ایڈزسے متاثرہ مریضوں کی تعداد 12 ہزارسے زائد بتائی جاتی ہے جن میں سے پانچ ہزار 432 مریض رجسٹرڈہیں۔محکمہ صحت کے مطابق پاکستان میں ایڈزکامرض انتہائی تیزی سے بڑھ رہاہے اورہرسال اس میں 40ہزارمریضوں کااضافہ ہوتاہے پشاورپریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے پراونشل ایڈزکنٹرول پروگرام کے ڈائریکٹرڈاکٹرمحمدسلیم نے بتایاکہ خیبرپختونخوامیں ملک کے دیگرصوبوں کی طرح ایڈزکے مریضوں کیلئے مفت علاج کی سہولت فراہم کی جارہی ہے اور اس وقت حیات آباد میڈیکل کمپلیکس پشاور،لیڈی ریڈنگ ہسپتال،ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹرہسپتال کوہاٹ،مردان میڈیکل کمپلیکس،خلیفہ گل نوازہسپتال بنوں،ایوب ٹیچنگ ہسپتال ایبٹ آباد،ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹرہسپتال ڈیرہ اسماعیل خان اورڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹرہسپتال بٹ خیلہ میں قائم سنٹرزمریضوں کو مفت ادویات اور مشاورت کی سہولت فراہم کررہے ہیں انہوں نے بتایاکہ پورے ملک میں ایچ آئی وی ایڈزمرض کے پھیلاؤکاسب سے بڑاذریعہ استعمال شدہ سرنج کو دوبارہ استعمال کرناہے 2016-17کے اینٹی گریٹڈبائیولاجیکل بی ہیویئرسرویلنس سروے رپورٹ کے مطابق 38فیصدسے زائد ایچ آئی وی کے مریضوں کو یہ موذی مرض استعمال شدہ سرنج کی وجہ سے ہواہے اس کے علاوہ اسوقت ملک میں متاثرہ مریضوں میں 7.6فیصدخواجہ سرا ہیں تاہم جنسی بے راہ روی کوبھی نظراندازنہیں کیاجاسکتا ملک میں لاحق مریضوں میں مردجنسی ورکرزکی تعداد 5.2اورخواتین جنسی ورکرزکی تعداد2.2فیصد ہے انہوں نے بتایاکہ اسوقت ایڈزکے مرض میں مبتلا پچاس فیسدافرادکاتعلق پنجاب،43فیصد کاسندھ،5.4فیصدخیبرپختونخوااور 2.5کاتعلق بلوچستان سے ہے خیبرپختونخوامیں 800سے زائدرجسٹرڈمریضوں کا تعلق پشاور سے ہے تاہم اس کایہ مطلب نہیں بیشترمریضوں کا تعلق دیگراضلاع سے ہے جوپشاورمیں رہائش پذیر ہیں 2018میں خیبرپختونخواکے جیلوں میں محصورقیدیوں کی سکریننگ کی گئی تواس میں 38ایچ آئی وی میں مبتلا قیدی سامنے آئے بعدمیں دستاویزی ثبوت سے پتہ چلاکہ زیادہ ترمنشیات میں ملوث افرادہیں جن کو پہلے سے انجکشن کے ذریعے یہ مرض لاحق ہواہے۔

مزید : صفحہ اول