چینی سائنسدانوں نے تمباکو سے کوکین بنانے کا طریقہ دریافت کرلیا

چینی سائنسدانوں نے تمباکو سے کوکین بنانے کا طریقہ دریافت کرلیا
چینی سائنسدانوں نے تمباکو سے کوکین بنانے کا طریقہ دریافت کرلیا
سورس: Representational Image

  

بیجنگ (ڈیلی پاکستان آن لائن) طبی استعمال کے باوجود کوکین ایک انتہائی نشہ آور مادہ ہے جو کسی بھی انسان کی صحت کے لیے نقصان دہ ہے۔ نیو سائنٹسٹ کی ایک رپورٹ کے مطابق چینی محققین نے تمباکو کے پودے کو جینیاتی طور پر تبدیل کر کے اس کے پتوں میں کوکین پیدا کی۔

سائنس نیوز میگزین کے مطابق، پیچیدہ بائیو کیمسٹری جو کوکا کے پودوں سے کوکین بناتی ہے اسے تمباکو کے پودے کے رشتہ دار میں ہٹا کر نقل کیا گیا ، اسی طریقے کو دوسری جگہوں پر استعمال کرکے   منفرد خصوصیات کے ساتھ کیمیاوی طور پر ملتے جلتے مرکبات تیار کرنے کا ایک طریقہ بن سکتا ہے۔

آن لائن میگزین انٹرسٹنگ انجینئرنگ کے مطابق، کوکین قدرتی طور پر پایا جانے والا ٹروپن الکلائیڈ ہے جو قدرتی طور پر  اریتھرو سائلم کوکا پلانٹ کے پتوں میں پیدا ہوتا ہے۔ اگرچہ  یہ اپنے غلط استعمال کے لیے بدنام ہے لیکن  کوکین اور اس کی اشیا کو  انسان صدیوں سے استعمال کرتے رہے ہیں۔ جنوبی امریکہ میں مقامی قبائل کم از کم 8000 سالوں سے کوکا کی کاشت کر رہے ہیں اور اس کے پتے چبا رہے ہیں کیونکہ یہ چستی پیدا کرتے اور  بھوک مٹاتے ہیں۔

نئی تحقیق میں، چین میں کنمنگ انسٹی ٹیوٹ آف باٹنی میں شینگ-ژیونگ ہوانگ اور ان کے ساتھیوں نے پہلے سے موجود دو انزائمز متعارف کروا کر عمل کو بہتر طور پر سمجھنے کا ایک طریقہ دریافت کیا ہے جنہیں EnMT4 اور EnCYP81AN15 کہا جاتا ہے۔ یہ انزائمز کیمیائی پیشگی کو کوکین میں تبدیل کرنے کے ذمہ دار ہیں۔

اس کو ثابت کرنے کے لیے محققین نے تمباکو کے سب سے قریبی رشتہ دار نکوٹیانا بینتھامیانا کو جینیاتی طور پر تبدیل کر کے یہ دو انزائمز پیدا کیے، جس کے نتیجے میں پودے کے پتوں میں کوکین کی ترکیب ہوتی ہے۔ تجربات سے معلوم ہوا کہ تبدیل شدہ پودا تقریباً 400 نینو گرام کوکین پیدا کر سکتا ہے۔ یہ  فی ملی گرام سوکھے پتے یا کوکا پلانٹ میں پائی جانے والی مقدار کا تقریباً 25 فیصد ہے۔

مزید :

سائنس اور ٹیکنالوجی -