ہائی وے کی ہوا میں سانس لینے سے بلڈ پریشر بڑھنے کا انکشاف لیکن کتنی دیر بعد تک اثر رہتا ہے؟ تحقیق کے بعد ماہرین نے خبردار کردیا

ہائی وے کی ہوا میں سانس لینے سے بلڈ پریشر بڑھنے کا انکشاف لیکن کتنی دیر بعد تک ...
ہائی وے کی ہوا میں سانس لینے سے بلڈ پریشر بڑھنے کا انکشاف لیکن کتنی دیر بعد تک اثر رہتا ہے؟ تحقیق کے بعد ماہرین نے خبردار کردیا
سورس: Rawpixel.com (creative commons license)

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

لاس اینجلس(شِنہوا) ایک نئی تحقیق کے مطابق ٹریفک کے رش کے اوقات میں بغیر فلٹر شدہ ہوا میں سانس لینے سے گاڑی میں رہتے ہوئے اور 24 گھنٹے بعد تک لوگوں کے بلڈ پریشر میں نمایاں اضافہ رہتا ہے۔

واشنگٹن یونیورسٹی کے محققین نے 22 سے 45 سال کی عمر کے صحتمند شرکا کو ان کے بلڈ پریشر کی نگرانی کرتے ہوئے رش کے اوقات میں سیاٹل شہر کی ٹریفک میں ڈرائیو کرایا۔غیر فلٹر شدہ ہوا کو دو کاروں میں داخل ہونے دیا گیا۔ جبکہ  تیسری کار اعلی معیار کے ایچ ای پی اے  فلٹرز سے لیس تھی جس نے 86 فیصد ذرات کی آلودگی کو روک دیا۔

اینالز آف انٹرنل میڈیسن میں شائع ہونے والی تحقیق کے مطابق غیر فلٹر شدہ ہوا میں سانس لینے کے نتیجے میں فلٹر شدہ ہوا کے ساتھ ڈرائیوز کے مقابلے میں بلڈ پریشر 4.50 ایچ جی ایم ایم  (ملی میٹرز مرکری) سے زیادہ بڑھا۔تحقیق  سے  معلوم ہوا کہ یہ اضافہ تیزی سے ہوا، تقریبا ایک گھنٹہ ڈرائیو میں انتہائی زیادہ اور کم از کم 24 گھنٹے تک مستحکم رہا۔

مزید :

تعلیم و صحت -