چیئرمین پی ٹی آئی کی توشہ خانہ کیس میں ٹرائل کورٹ کا فیصلہ معطل کرنے کی استدعا پر فیصلہ محفوظ

چیئرمین پی ٹی آئی کی توشہ خانہ کیس میں ٹرائل کورٹ کا فیصلہ معطل کرنے کی ...
چیئرمین پی ٹی آئی کی توشہ خانہ کیس میں ٹرائل کورٹ کا فیصلہ معطل کرنے کی استدعا پر فیصلہ محفوظ

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)اسلام آباد ہائیکورٹ نے چیئرمین پی ٹی آئی کی توشہ خانہ کیس میں ٹرائل کورٹ کا فیصلہ معطل کرنے کی استدعا پر فیصلہ محفوظ کرلیا۔

نجی ٹی وی چینل دنیا نیوز کے مطابق  اسلام آباد ہائیکورٹ میں چیئرمین پی ٹی آئی کی توشہ خانہ کیس میں سزا کیخلاف مرکزی اپیل پر سماعت ہوئی،چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ عامر فاروق کی سربراہی میں 2رکنی بنچ نے سماعت کی،چیئرمین پی ٹی آئی کے وکیل سردار لطیف کھوسہ نے کہاکہ ہم نے ایک متفرق درخواست بھی دی ہے،فیصلے کے تناظر میں ہونیوالی کارروائی روکنے کی استدعا کی ہے،8 اگست کو الیکشن کمیشن کی جانب سے ایک نوٹیفکیشن جاری کیاگیا، الیکشن کمیشن نے ٹرائل کورٹ کے فیصلے کے تناظر میں نااہل قرار دیا،ہم نے سزا معطلی درخواست کی سماعت کے دوران کارروائی روکنے کی بھی استدعا کی تھی۔

چیف جسٹس ہائیکورٹ نے استفسار کیا کہ آپ کہہ رہے ہیں کہ سزا معطلی کے حکم کو موڈیفائی کریں؟لطیف کھوسہ نے کہا کہ آپ کو بتاتا ہوں کہ میں اس آرڈر میں کیوں ترمیم چاہتا ہوں،جس آرڈر کی بنیاد پر الیکشن کمیشن نے نوٹیفکیشن جاری کیا وہ معطل ہو چکا ہے۔

8فروری 2024کو قومی انتخابات ہونے جارہے ہیں،مجھے کہا گیا ہے کہ 20روز میں انٹراپارٹی الیکشن کروائیں،چیئرمین پی ٹی آئی کے بغیر پی ٹی آئی کچھ نہیں،فیصلہ معطل نہ ہوا تو چیئرمین پی ٹی آئی کے بنیادی حقوق متاثر ہوں گے،چیئرمین پی ٹی آئی کی سزا معطل نہ ہوئی تو پولیٹیکل پارٹی متاثر ہو گی۔

لطیف کھوسہ نے کہاکہ کارروائی نہ روکی گئی تو انتخابات متاثر ہو سکتے ہیں،انتخابی عمل پر اثرات کا ریاست پر بھی اثر ہو سکتا ہے، عدالت توشہ خانہ کیس میں سزا کیساتھ ٹرائل کورٹ کا فیصلہ بھی معطل کرے،استدعا ہے کہ عدالت سزا معطلی کے فیصلے پر نظرثانی کرے،ہائیکورٹ کے پاس اپنے فیصلے پر نظرثانی کا مکمل اختیار ہے،لطیف کھوسہ نے توشہ خانہ فوجداری کیس میں سزا کا فیصلہ معطل کرنے کی استدعا کردی۔

امجد پرویز نے کہاکہ نئے گراؤنڈز کے بغیر چیئرمین پی ٹی آئی کی درخواست قابل سماعت نہیں،چیف جسٹس ہائیکورٹ نے کہاکہ فی الحال تو اس درخواست کے ذریعے سزا معطلی فیصلے میں موڈیفکیشن کی استدعا کر رہےہیں،لطیف کھوسہ نے کہاکہ ہم نے زبانی استدعا کی تھی، وکیل الیکشن کمیشن بھی اس سے اتفاق کریں گے،امجد پرویز نے استدعا کی کہ 2ہفتے کا وقت دے دیں تو عدالت کی معاونت کروں گا، چیف جسٹس عامر فاروق نے کہاکہ آپ ایک، دو دن میں عدالتی حوالے جمع کرا دیں،بحث تو ہو چکی ہے،جتناجلدی ممکن ہو تحریری معروضات جمع کرا دیں، ہم فیصلہ جاری کریں گے۔

اسلام آباد ہائیکورٹ نے لطیف کھوسہ کے دلائل سننے کے بعد چیئرمین پی ٹی آئی کی توشہ خانہ کیس میں ٹرائل کورٹ کا فیصلہ معطل کرنے کی استدعا پر فیصلہ محفوظ کرلیا۔