خیبر پختونخوا میں زراعت ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتی ہے ، خصوصی توجہ دینگے

خیبر پختونخوا میں زراعت ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتی ہے ، خصوصی توجہ دینگے

  

نوشہرہ(بیورورپورٹ)صوبائی وزیر ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن میاں جمشیدالدین کاکاخیل نے کہا ہے کہ موجودہ صوبائی حکومت زراعت کے شعبے پر خصوصی توجہ دے رہی ہے کیونکہ ہمارے ملک اور بالخصوص صوبہ خیبرپختونخوا میں زراعت معیشت میں ریڑھ کی ہڈی کی سی حیثیت رکھتی ہے زمینداروں اور کسانوں کی خوشحالی و ترقی ہماری اولین ترجیح ہے سابقہ ادوار میں کسانوں اور زمینداروں کیلئے کچھ نہیں کیاگیا تھا اس لئے ہم زرعی پر مستحکم نہیں ہے اب مفت گندم تخم سے کسانوں اور زمینداروں پر بوجھ کم ہوجائے گا ان خیالات کااظہار انہوں نے نوشہرہ میں کسانوں اور زمینداروں میں گندم کا تختم مفت تقسیم کرنے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا اس موقع پر صوبائی ڈائریکٹر جنرل زراعت کیش بہادر، ضلعی ڈائریکتر زراعت لیاقت علی خان، ویلج ناظم حاجی اعجاز خان، ضلعی ممبر قاضی واجد، زاہد حیات، ناظم ماہرالدین، جانس خان، سابقہ ناظم فلک نواز خان بھی موجود تھے میاں جمشیدالدین کاکاخیل نے کہا کہ سابقہ حکمرانوں نے شعبہ زراعت سمیت پورے صوبے کے عوام کیلئے کچھ نہیں کیا تھا لیکن موجودہ صوبائی حکومت نے پرویز خان خٹک کی قیادت میں زمینداروں اور کسانوں کی خوشحالی کیلئے بھرپور اقدامات شروع کردئیے ہیں اس سال دو کنال سے لیکر 24کنال زرعی اراضی کے مالکان کسانوں اور زمینداروں کو مفت گندم تختم دینے کا اصولی فیصلہ کیا ہے جو کہ واضح تبدیلی ہے انہوں نے کہا کہ رواں سال ایک ارب روپے کا مفت گندم تخم تقسیم ہوگا جس سے نوشہرہ سمیت صوبہ بھر کے دس لاکھ 68ہزار کسان اور زمیندار مستفید ہوں گے اور اس کے نتیجے میں صوبے کے مالی آمدن میں بھی پانچ ارب روپے تک اضافہ ہوگا اور صوبے میں ایک لاکھ 86ہزار ٹن گندم کی پیداوار میں بھی اضافہ ہوگا جس سے صوبہ خیبرپختونخوا گندم کی پیداوار میں خود کفیل ہوجائے گا کیونکہ سالانہ 42 لاکھ ٹن گندم کی ضرورت ہے او ر ہمارے صوبے کی پیداوار 18 لاکھ ٹن ہے انصاف فوڈ سیکورٹی پروگرام کے بعد پنجاب سے گندم درآمد نہیں کرنا پڑے گا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -