سی اینڈ ڈبلیو ڈیپارٹمنٹ کا انوکھا اقدام ،سڑکوں کی تعمیر کا فیز ون مکمل کئے بغیر ہی فیز ٹو کے ٹینڈر الاٹ

سی اینڈ ڈبلیو ڈیپارٹمنٹ کا انوکھا اقدام ،سڑکوں کی تعمیر کا فیز ون مکمل کئے ...

  

 لاہور(شہباز اکمل جندران/انویسٹی گیشن سیل) سی اینڈڈبلیو ڈیپارٹمنٹ کا انوکھااقدام ،خادم پنجاب دیہی روڈز پروگرام کے زیر تکمیل فیز ون کو مکمل کئے بغیر ہی فیز ٹو کے ٹینڈر الاٹ کردئے۔ صوبائی حکومت نے فیز ون کی تکمیل میں سست روی اور ناقص معیار پر تحفظات ظاہر کئے تو انتظامیہ نے نظروں میں دھول جھونکنے کے لئے ناقص کارکردگی کے حامل جہلم ، گوجرانوالہ ، سیالکوٹ اور میانوالی کے ہائی ویز کے ایگزیکٹو انجینئروں کو آخری وارننگ کے الفاظ پر مبنی خط جاری کردئے ہیں۔ انجینئروں کو اس سے قبل بھی کئی مرتبہ خط جاری ہوچکے ہیں جبکہ فیز ون کی مدت تکمیل گزرنے پر سپرنٹنڈنٹ انجینئر ہائی ویز سرکل سرگودھا شفقت علی بٹر، ایکسیئن روڈ کنسٹرکشن ڈویژن راولپنڈی یونس علی،ایکسیئن ہائی ویز ڈویژن سیالکوٹ محمد ارشد اور ایکسیئن ہائی ویز ڈویژن راولپنڈی شفیق الرحمن کے خلاف کارروائی کرنے کی بجائے انہیں 10دن کی مزید مہلت دیدی تھی۔بتایا گیا ہے کہ سی اینڈڈبلیو ڈیپارٹمنٹ نے خادم پنجاب دیہی روڈ ز پروگرام کے پہلے مرحلے میں ناکامی اور فیز ون کو مکمل کئے بغیر ہی فیز ٹو کے ٹینڈر ہنگامی بنیادوں پر الاٹ کردئے ہیں جس کے تحت 15ارب روپے کی لاگت سے صوبے کے 36ضلعوں میں 17سو کلومیٹرطویل سٹرکیں تعمیر کی جائیں گی۔بتایا گیا ہے کہ سی اینڈڈبلیو کی انتظامیہ کے پی آر آر پی کے پہلے فیز میں نہ تو منصوبہ بروقت مکمل کرسکی ہے نہ ہی معیار اور مقدار کو برقرار رکھ سکی ہے۔صوبائی حکومت نے خادم پنجاب دیہی روڈز پروگرام کے تحت صوبائی محکمہ مواصلات وتعمیرات کو صوبے کے 32اضلاع میں 2ہزار 2سو کلومیٹر طویل 255سٹرکوں کی تعمیر و توسیع کا ٹاسک دیا تھا۔ فیز ون کی تکمیل کے لئے سی اینڈڈبلیو کو 30ستمبر تک کی مہلت دی گئی لیکن بدقسمتی سے سی اینڈڈبلیو ڈیپارٹمنٹ کو اس ٹاسک کے حوالے سے مسلسل ناکامی کا سامنا ہے۔ایک طرف یہ منصوبہ تاحال مکمل نہیں ہوسکا تو دوسری طرف محکمے کی اپنی ہی روڈ ریسرچ لیبارٹری کے علاوہ تھرڈ پارٹی انسپیکشن ٹیمیں بھی بنائی جانے والی نئی سٹرکوں میں ناقص مٹیریل کے استعمال کو ظاہر کرتے ہوئے کمپیکشن ،موٹائی، سب بیس ، بیس اور سب گریڈ کے متعدد ٹیسٹ فیل کرچکی ہیں۔لیکن سی اینڈڈبلیو کے سیکرٹری میاں مشتاق احمد نے چہیتے انجینئروں کے خلاف قابل ذکر کارروائی نہ کی اور محض صوبائی حکومت کی آنکھوں میں دھول جھونکنے کی کوشش کرتے ہوئے انجینئروں کو تنبیہی خطوط جاری کرنے پر ہی اکتفا کیا۔ذرائع کے مطابق سی اینڈڈبلیو کے ڈپٹی سیکرٹری ایڈمن تنویر ماجد نے ناقص کارکردگی کے حامل ایگزیکٹو ا نجینئر ہائی ویز ڈویژن جہلم جمیل احمد بسرا، ایگزیکٹو انجینئرہائی ویز گوجرانوالہ جمشید خان،ایگزیکٹوانجینئر ہائی ویز سیالکوٹ محمد ارشد اور ایگزیکٹو انجینئر ہائی ویز میانوالی نوید احمد بھٹی کو آخری وارننگ کے الفاظ پر مبنی خط جاری کردئے ہیں۔ذرائع کا کہنا ہے کہ انجینئروں کو اس سے قبل بھی کئی مرتبہ خط جاری ہوچکے ہیں۔جبکہ فیز ون کی مدت تکمیل گزرنے پر سپرنٹنڈنٹ انجنئیر ہائی ویز سرکل سرگودھا شفقت علی بٹر، ایکسینئن روڈ کنسٹرکشن ڈویژن راولپنڈی یونس علی،ایکسیئن ہائی ویز ڈویژن سیالکوٹ محمد ارشد اور ایکسیئن ہائی ویز ڈویژن راولپنڈی شفیق الرحمن کے خلاف کارروائی کرنے کی بجائے انہیں 10دن کی مزید مہلت دیدی تھی۔

فیز ٹو کے ٹینڈر

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -