مہران یونیورسٹی جلد ایشیاء کی بڑی یونیورسٹی ہوگی ،عبداللہ حسین ہارون

مہران یونیورسٹی جلد ایشیاء کی بڑی یونیورسٹی ہوگی ،عبداللہ حسین ہارون

  

حیدرآباد(بیورو رپورٹ)اقوام متحدہ میں پاکستان کے سابق مندوب عبداللہ حسین ہارون نے کہا ہے کہ وہ مہران یونیورسٹی جامشورو کو ایشیاء کی بڑی یونیورسٹی دیکھنے کے خواہشمند ہیں یونیورسٹی میں یہ صلاحیتیں موجود ہیں کہ مستقبل قریب میں یہ ایشیاء کی ایک بڑی یونیورسٹی ہوگی۔مہران یونیورسٹی آف انجنئیرنگ اینڈ ٹیکنالوجی جامشورو کے مرکزی آڈیٹوریم میں مختلف شعبوں کے طلبہ کے درمیان تقاریری مقابلہ اشاق صفی کے تقریری مجموعے کا افتتاح معروف دانشور اور اقوام متحدہ میں پاکستان کے سابق مندوب عبداللہ حسین ہارون اور وائس چانسلر مہران یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر محمد اسلم عقیلی نے کیا۔تقریب سے خطاب میں عبداللہ حسین ہارون نے کہا کہ بد قسمتی سے ہمارے پاس سنجیدگی کا فقدان ہے ہمیں چاہیئے کہ ہم عرب دنیا اور خاص طور پر شام ، مصر ، لیبیا اور عراق میں خانہ جنگی جیسی صورتحال سے عبرت حاصل کریں، انہوں نے کہا کہ پاکستان ، ترکی اور ایران کو مشترکہ طور پر بہت زیادہ کام کرنے کی ضرورت ہے ہمیں مشرقی تیمور ، بوسنیا وغیرہ جیسے بحرانوں سے سبق حاصل کرنا چاہیئے۔وی سی پروفیسر ڈاکٹر محمد اسلم عقیلی نے کہا کہ مہران یونیورسٹی نے مختصر عرصے میں نمایاں ہدف حاصل کئے ہیں ہمارا خواب ہے کہ اس کا شمار دنیا کی 100 بہترین جامعات میں ہو، انہوں نے کہا کہ مہران یونیورسٹی کا سفر1963ء سے ایک کالج کی حیثیت میں شروع ہوا اور آج ہمارے پاس17 شعبے قائم ہو چکے ہیں اور پاکستان میں انجنیئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی میں ہماری یہ واحد یونیورسٹی ہے جہاں 17شعبے ہیں، انہوں نے کہا کہ ہمارے پاس تحقیق پر خاص دہان دیا جا رہا ہے یہی وجہ ہے کہ دنیا کے بہترین اداروں میں مہران یونیورسٹی کے گریجویٹس کو ملازمت کی پیشکش کی جاتی ہیں، انہوں نے کہا کہ مہران یونیورسٹی کی اسی قابلیت کو پرکھتے ہوئے یو ایس ایڈ نے مہران یونیورسٹی کو پانی کے اعلیٰ سطحی تحقیقی مرکز کے لئے منتخب کیا۔معروف قانون دان مجیب الدین پیرزادہ نے کہا کہ وہ بھی مہران یونیورسٹی سے گریجویٹ ہیں جب یہ کالج تھا آج مہران یونیورسٹی قابل فخر ادارہ بن چکا ہے، انہوں نے کہا کہ ہمارا مادر وطن آج جس صورتحال سے دوچار ہے اس پر سوچتے ہوئے تکلیف ہوتی ہے ہماری دھرتی صوفیوں اور عظیم تہذیب کی وارث آج بدامنی سمیت دیگر مسائل میں گھری ہوئی ہے۔اس موقع پر اشفاق صفی اور رفیق صفی نے اپنے تقریری مقابلوں کے کلچر اور اپنی یاداشت سے متعلق شرکاء سے تبادلہ خیالات کیا جبکہ اشفاق صفی کی کتاب " Public Speaking in 19607191" کا افتتاح کیا گیا، رجسٹرار پروفیسر ڈاکٹر طحہٰ حسین علی نے بھی تقریری کلچر پر روشنی ڈالی اور مہمانوں کا شکریہ ادا کیا۔انگریزی، سندھی اور اردو میں مختلف موضوعات پر تقریری مقابلوں میں سیدہ تنزیلا، عالم سومرو اور اصفرعلی نے پوزیشنیں حاصل کیں انہیں انعام اور ٹرافیاں دی گئیں جبکہ مہمانوں کو بھی شیلڈز پیش کی گئیں، اس موقع پر ڈین فیکلٹی آف آرکیٹیکچر اینڈ سول انجنیئرنگ ڈاکٹر غوث بخش خاصخیلی ، ڈین فیکلٹی آف انجنیئرنگ ڈاکٹر حفیظ الرحمن میمن، مہران یونیورسٹی خیرپور میرس کیمپس کے پرووائس چانسلر انجنیئر غلام سرور کندھر ، ڈائریکٹر فنانس منیر احمد شیخ ، فیکلٹی میمبران اور طلبہ کی بڑی تعداد موجود تھی۔

مزید :

کراچی صفحہ آخر -