سری نگر، بھارتی فوج کی فائرنگ سے ایک اور کشمیری شہید، 24زخمی، 60گرفتار

سری نگر، بھارتی فوج کی فائرنگ سے ایک اور کشمیری شہید، 24زخمی، 60گرفتار

سری نگر (مانیٹرنگ ڈیسک،اے این این) مقبوضہ وادی میں کرفیو 113 ویں روز میں داخل ہو گیا۔ تعلیمی ادارے، دکانیں، کاروبار اور پبلک ٹرانسپورٹ سب بند ہیں۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق سرچ آپریشن کے نام پر کپواڑہ میں ایک اور نوجوان کو شہید کر دیا گیا ہے۔ کٹھ پتلی انتظامیہ نے احتجاج روکنے کے لیے جگہ جگہ خاردار تاریں لگا رکھی ہیں۔ بھارتی فورسز نے حریت رہنماؤں کو بھی گھروں میں نظر بند کر رکھا ہے۔دوسری طرف اے این این کے مطابقٗ مختلف علاقوں میں کرفیو میں مزید سختی ٗ مساجد پر تالے ڈال کر لوگوں کو نماز پڑھنے سے روک دیا گیا ٗ سری نگر کی تاریخی جامع مسجد بھی بدستور بند ٗ ہزاروں افراد کے بھارتی فوج اور ریاستی انتظامیہ کے خلاف احتجاجی مظاہرے ٗ مشتعل نوجوانوں نے فوج کی4 گاڑیوں کو نذر آتش کردیا ٗ سکیورٹی فورسز کی جانب سے پکڑ دھکڑ کا سلسلہ بھی جاری ٗ 60 سے زائد نوجوانوں کو حراست میں لے کر تھانوں میں بند کردیا گیا ٗ وادی میں انٹرنیٹ اور موبائل فون سروس تاحال معطل ۔ تفصیلات کے مطابق مشترکہ حریت قیادت نے گزشتہ روز کشمیری عوام سے کرفیو توڑ کر تاریخی جامع مسجد میں مشترکہ طور پر نماز ادا کرنے کی اپیل کی تھی۔ اس کال کے پیش نظر انتظامیہ نے پائین شہر کے تھانوں کے تحت آنے والے علاقوں کے حدود میں آنے والے علاقوں میں کرفیو نا فذ کیا ۔ تھا جبکہ سرینگر کے دیگر سیو ل لائنز علاقوں میں غیر اعلانیہ کرفیو اور بندشیں عائد کی گئی تھی ۔ شہر خاص کے ان علاقوں میں گزشتہ شام سے ہی اضافی فورسز اور پولیس اہلکاروں کو تعینات کیا گیا تھا جبکہ وہ احتجاجی مظاہروں کو منتشر کرنے کیلئے جدید ساز و سامان سے لیس تھے۔پائین شہر کی بیشتر سڑکوں ، گلی کوچوں اور نکڑوں پر تعینات پولیس اور سی آر پی ایف کے اہلکاروں نے لوگوں کو سختی کے ساتھ گھروں سے باہر آنے سے منع کر دیا ، جس وجہ سے لاکھوں کی تعداد میں لوگ گھروں میں محصور ہوکر رہ گئے۔چھتہ بل ، قمرواری ،گوجوارہ ،صفاکدل ، نور باغ ، کاوڈارہ، نوہٹہ، عیدگاہ،سعدہ کدل، سکہ ڈافر، راجوری کدل، بہوری کدل، ملارٹہ، حبہ کدل، زینہ کدل ،فتح کدل، نواب بازار، خانیار، رعناواری، خانقاہ معلی ،نواکدل ،قمرواری ،مہاراج گنج ،ناؤپورہ اور پائین شہر کے دیگر علاقوں میں کرفیو کے نتیجے میں ہو کا عالم تھا اور سڑکوں پرصرف فورسز اور پویس اہلکار گشت کرتے نظر آ رہے تھے۔

مزید : صفحہ آخر