بیٹی پر تشدد کرنے والے پاکستانی ڈاکٹر کو دس ماہ قید

بیٹی پر تشدد کرنے والے پاکستانی ڈاکٹر کو دس ماہ قید
بیٹی پر تشدد کرنے والے پاکستانی ڈاکٹر کو دس ماہ قید

  

لندن(این این آئی)برطانیہ میں بیٹی کو تشددکا نشانہ بنانے پر پاکستانی ڈاکٹر کو گرفتارکرلیاگیا٬میڈیارپورٹس کے مطابق 57سالہ پاکستانی نژادبرطانوی ڈاکٹر گوہر رحمان نے اپنی 17سالہ بیٹی کو ہالووین پارٹی میں شرکت سے منع کیا لیکن اس نے باپ کی حکم عدولی کرتے ہوئے نہ صرف پارٹی میں شرکت کی بلکہ رات اپنے ایک مرد دوست کے گھر گزاری۔

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

وہ اپنے باپ کو سہیلی کے گھر جانے کا جھوٹ بول کر نکلی اور کہا کہ رات ساڑھے 9بجے تک واپس ا جائے گی تاہم وہاگلے روز واپس آئی جس پر باپ نے اسے تشدد کا نشانہ بنایا اور اسے فاحشہ کہہ دیا جس پر نافرمان بیٹی نے پولیس بلالی اور باپ کو گرفتار کروادیا۔ عدالت نے گوہر رحمان کو 10 ماہ قید کی سزا سنادی اور اب وہ پروبیشن پر ہیں۔ ان کی بیٹی نے کہا م یرا باپ وحشی ہے۔ اس واقعے کے بعد میں نفسیاتی خلفشار کا شکار ہوچکی ہوں جس سے میری پڑھائی متاثر ہورہی ہے۔

مزید : برطانیہ