حج آپریشن کے دوران سماجی شخصیات اور اداروں کی رضاکارانہ خدمات قابل تحسین ،وفاقی وزیر مذہبی امور

حج آپریشن کے دوران سماجی شخصیات اور اداروں کی رضاکارانہ خدمات قابل تحسین ...

ملتان(سٹی رپورٹر)وفاقی وزیر مذہبی امور و بین المذاہب ہم آہنگی پیر نور الحق قادری نے کہا ہے کہ حج آپریشن 2018 کے دوران (بقیہ نمبر16صفحہ12پر )

ڈائریکٹورٹ آف حج ملتان کے ساتھ سماجی شخصیات اور اداروں کی رضاکارانہ خدمات قابل تحسین ہیں ان خیالات کا اظہار انہوں نے ایک تقریب میں صدر ینگ پاکستانیز آرگنائزیشن و نوجوان سماجی رہنما نعیم اقبال نعیم کو ڈائریکٹورٹ آف حج وزارت مذاہبی امور و بین المذاہب ہم آہنگی حکومت پاکستان ملتان کی جانب سے ’’ اعتراف خدمات ‘‘ ایوارڈ پیش کرتے ہوے کیا اس موقع پر ڈائریکٹر حج ملتان ملک ریحان عباس کھوکھر نے کہا کہ حج آپریشن کے دوران نعیم اقبال نعیم نے جو حج ڈائریکٹوریٹ ملتان کے ساتھ مل کر خدمات سرانجام دی یہ ایوارڈ ان خدمات کا اعتراف ہے اس موقع پر سینیر جوائنٹ سیکرٹری حج زینت حسین بنگش اور جوائنٹ سیکر ٹری وزارت مذاہبی امور راجہ زاہد بھی موجود تھے۔ وفاقی وزیر مذہبی امور پیر نورالحق قادری نے کہا ہے کہ پرائیویٹ ٹورز آپریٹرز کے حج کوٹہ میں اضافہ کیا جائے گا ملتان کے پرائیویٹ ٹورز آپریٹرز نے 2018میں حجاج کرام کی بہتر خدمت کا فریضہ ادا کیا جبکہ ڈائریکٹوریٹ آف حج ملتان کی پرائیویٹ اور سرکاری حجاج کی تربیت کے لئے مثالی خدمات کو فراموش نہیں کیا جاسکتا ان خیالات کا اظہار انہوں نے پرائیویٹ ٹورز آپریٹرز کی جانب سے اپنے اعزاز میں دیئے گئے ظہرانہ سے خطاب کرتے ہوئے کیا جس میں قومی اسمبلی کے چیف ویپ ملک عامر ڈوگر، مدرسہ خیرالمدارس کے مہتمم قاری محمد حنیف جالندھری نے خصوصی شرکت کی جبکہ ظہرانے کا اہتمام ٹورز آپریٹرز شیخ محمد امین ، قاری امان اللہ مدنی ، محمد اسلم بھٹہ، ممتاز بھٹہ نے کیا تھا پیر نورالحق قادری نے مزید کہا کہ حکومت چاہتی ہے کہ حجاج کرام کی ہر ممکن اور پہلے سے زیادہ خدمت کی جائے اور انہیں ہر ممکن سہولیات دی جائیں تاکہ وہ کسی بھی مشکل کے بغیر اپنی عبادات کرسکیں اس سلسلے میں سرکاری سکیم کے تحت بھی حجاج کرام کو ہر ممکن سہولیات دی گئی ہیں جبکہ پرائیویٹ ٹورز آپریٹرز نے بھی حجاج کرام کی بہتر خدمت کا فریضہ ادا کیاہے اس سلسلے میں 2018میں جو انتظامات کئے گئے وہ مثالی تھے وفاقی وزیر نے مزید کہا کہ ہماری کوشش ہو گی کہ حج پالیسی کم از کم آئندہ 5سال کے لئے مرتب کی جائے اور اسے قانونی شکل دی جائیگی۔

مزید : ملتان صفحہ آخر