ڈی جی خان میں گندم رکھنے کیلئے بنائے گئے سیلوز چالونہ ہوسکے‘ پی ایف ایم اے

ڈی جی خان میں گندم رکھنے کیلئے بنائے گئے سیلوز چالونہ ہوسکے‘ پی ایف ایم اے

لاہور(کامرس رپورٹر)پاکستان فلور ملز ایسوسی ایشن (پنجاب) کے چےئرمین حبیب الرحمن خان لغاری نے کہا کہ ڈیرہ غازی خان میں نیسپاک اور بلڈنگ دیپاڑنمنٹ کی غفلت کے باعث کروڑوں روپے لاگت سے گندم سٹور کرنے کیلئے بنائے گئے30 ہزار میٹرک ٹن کے سیلوز تاحال فنکشنل نہ ہو سکے ، 2012-13 میں محکمہ خوراک اور بلڈنگ ڈیپارٹمنٹ اس منصوبے کا آغاز کیا تھا جسے 2015-16 تک مکمل کر کے دینا تھا جس پر 35 کروڑ روپے خرچ کئے گئے ،یہ بات پی ایف ایم اے (پنجاب ) کے چےئرمین حبیب الرحمن لغاری نے اپنے ایک بیان میں کہی ۔ انہوں نے کہا کہ کروڑوں روپے کی لاگت سے گندم رکھنے کیلئے یہ سیلوز بنائے گئے تھے جس سے فلور ملرز کو بھی صاف ستھری گندم دستیاب ہوتی اور حکومت کو باردانے کے اوپر آنے والے اضافے اخراجات سے بھی کسی حد تک بچایا جا سکتا تھا اس میں براہ راست حکومت کا اپنا فائدہ تھا۔

لیکن محکمہ نیسپاک اور بلڈنگ ڈیپارٹمنٹ کی غفلت کے باعث یہ سیلوز فنکشنل نہیں ہو سکے، محکمہ خوراک پنجاب ہمیں بتائے کہ اس کا ذمہ دار کون ہے تاکہ اس کی درست سمت میں انکوائری کروائی جا سکے۔انہوں نے کہاکہ 2016-17 میں ملتان میں بھی محکمہ خوراک پنجاب کی جانب سے سٹیل سیلوز کی مرمت کروائی گئی جس پر مرمت کی مد میں6 کروڑ روپے اخراجات آئے لیکن وہ بھی تا حال وہ بھی فنکشنل نہیں کئے گئے، ملتان کا سٹیل سیلوز 42 ہزار میٹرک ٹن گنجائش کا حامل ہے ،انہوں نے کہاکہ ہم سیکرٹری فوڈ اور ڈائریکٹر فوڈ سے مطالبہ کرتے ہیں کہ فوری طور پر ذمہ داروں کا تعین کر کے ہمیں بتائیں تاکہ ہم اس کا کیس تیار کر کے نیب کو بجھوا سکیں کیونکہ آج تک اس کا کسی کوبھی ذمہ دار نہیں ٹھہرایا جا سکا۔، انہوں نے کہاکہ ہم وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدار سے بھی مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ بھی قومی خزانے سے کروڑوں روپے کے ضیائع کا فوری طور پر نوٹس لیں اور ذمہ دار افراد کے خلاف قانونی شکنجہ کسا جائے ۔

مزید : کامرس