جبری برطرفیوں کے بعد صحافیوں نے ’جرنلسٹ پکوڑا شاپ‘کھول لی ،بلاول بھٹو زرداری نے بھی جا کر پکوڑے کھا لیے ،تصاویر دیکھ سامنے آگئیں

جبری برطرفیوں کے بعد صحافیوں نے ’جرنلسٹ پکوڑا شاپ‘کھول لی ،بلاول بھٹو ...
جبری برطرفیوں کے بعد صحافیوں نے ’جرنلسٹ پکوڑا شاپ‘کھول لی ،بلاول بھٹو زرداری نے بھی جا کر پکوڑے کھا لیے ،تصاویر دیکھ سامنے آگئیں

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن )پاکستان میں میڈ یا انڈسٹری ایک مشکل دور سے گزر رہی ہے اور بہت سے اداروں نے مالی مشکلات کے بعد ہزاروں صحافیوں کو جبری طور پر برطرف کردیا گیا ہے جس پر صحافی برادری سراپا احتجاج ہے ۔ایک نجی نیوز چینل نے پورے پاکستان سے تمام ملازمین کو برطرف کر کے چینل بند کردیا گیا ہے جبکہ بہت سے چینلز میں اینکرپرسنز کی تنخواہوں میں بھی کمی کی گئی جبکہ عملے میں بھی کمی کردی ہے ۔ایسی صورتحال میں صحافتی تنظیمیں حکومت کے ساتھ بات چیت کر رہی ہیں اور گزشتہ واجبات کی ادائیگیوں سے متعلق بھی بات کر رہی ہیں جبکہ دوسری جانب نجی نیوز چینل کے پروگرام ’محاذ ‘میں گفتگو کرتے ہوئے ہوئے ایک موقع پر وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا کہ گزشتہ دور حکومت میں میڈ یا پر ہمارے دھرنے کے خلاف اشتہارات چلائے گئے جس کی ادائیگیوں کی بات کی جا رہی ہے ،اس معاملے کو دیکھیں گے ،ہو جائیں گے ادائیگیاں۔

اس تمام صورتحال سے پریشان صحافیوں نے پارلیمنٹ ہاوس کے باہر پکوڑا شاپ بنالی۔

مائیکرو بلاگنگ ویب سائٹ ٹوئٹر پر اینکر پرسن حامد میر نے تصویریں شیئر کیں اور ساتھ ہی پیغام لکھا کہ یہ ہے نیا پاکستان جہاں صحافی پارلیمنٹ ہاوس کے باہر پکوڑے بیچ رہے ہیں منگل کو بلاول بھٹو زرداری نے صحافیوں کی جبری برطرفیوں کے خلاف احتجاج کے لئےپارلیمنٹ کے باہر لگائی گئی جرنلسٹ پکوڑا شاپ کا دورہ کیا اور صحافیوں کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کیا۔

مزید : قومی