اشتعال انگیز تقاریر، محمد صفدر کے خلاف کیس کی سماعت2 دسمبر تک ملتوی

اشتعال انگیز تقاریر، محمد صفدر کے خلاف کیس کی سماعت2 دسمبر تک ملتوی

  

لاہور(نامہ نگار)ضلع کچہری کے جوڈیشل مجسٹریٹ حافظ نفیس نے کیپٹن (ر)محمدصفدر کے خلاف اشتعال انگیز تقاریر اور اداروں کے خلاف بیانات کے مقدمہ کی سماعت 2دسمبرتک ملتوی کرتے ہوئے پراسکیوشن اور ملزم کے وکلاء کو ابتدائی دلائل کے لئے طلب کر لیاہے گزشتہ روزکیپٹن (ر)محمد صفدر اپنے وکیل فرہاد علی شاہ کے ہمراہ عدالت میں پیش ہوئے عدالت میں تھانہ اسلام پورہ کی جانب سے چالان جمع کرا دیا گیاہے،جس میں کہاگیا ہے کہ لیگی رہنما ملزم کیپٹن صفدر اپنے کیس کی سماعت کیلئے سیشن کورٹ پیش ہوئے، بعد ازاں کیپٹن صفدر بار روم میں چلے گئے جہاں پر انھوں نے حکومت مخالف نامناسب تقریر کی، کیپٹن صفدر وہاں پر ایک ویڈیو بیان کے ذریعے حکومت پاکستان کیخلاف عوام کو  اکسایا، کیپٹن صفدر نے حکومت کو گرانے اور حکومت کے خلاف عوام کو باہر نکلنے کیلئے اکسایا، ملزم کے وکیل نے موقف اختیار کیاکہ اس مقدمہ میں ایف آئی آر کے وقت صرف ایک دفعہ 16 ایم پی او شامل تھی، اب 124 (اے) اور 506 بی دھمکیاں دینے کی دفعات کیسے شامل کر لی گئیں،پراسیکیوشن نے یہ دفعات قانون کے خلاف لگائیں ہیں، پراسیکیوشن کمیٹی نے کیپٹن (ر)محمد صفدر کے خلاف چالان عدالت میں پیش کر رکھا ہے کیپٹن (ر)محمد صفدر اشتعال انگیز تقاریر کرنے کے مقدمہ میں سیشن عدالت سے ضمانت پر ہیں۔

مزید :

علاقائی -