کتنے حیراں ہوئے کیسے پریشان ہوئے| پیر مہر علی شاہ |

کتنے حیراں ہوئے کیسے پریشان ہوئے| پیر مہر علی شاہ |
کتنے حیراں ہوئے کیسے پریشان ہوئے| پیر مہر علی شاہ |

  

کتنے حیراں ہوئے کیسے پریشان ہوئے

جب سے اُس نرگسِ بیمار کو دیکھا ہے

بن پیے پھرتے ہو ہر سمت جو حیران و خراب

کس لیے مست کو سرشار کو دیکھا ہے

نہ ہوئے قید مگر پھنس گئے زنجیروں میں

ہائے کیوں زلف کے اُس تار کو دیکھا ہے

نرگسِ مست کی مہر اُس کو ملے گی بے شک

آکے جب مہر کو بیمار کودیکھا ہے

شاعر: پیر مہر علی شاہ

 ( شعری مجموعہ:کلام پیر مہر علی شاہ )

Kitnay   Hairaan    Huay   Kaisay   Pareshaan    Huay

Jab   Say   Uss   Nargiss -e-Bemaar     Ko    Daikha   Hay

 Bin   Piay   Phirtay   Ho   Har   Samt   Jo   Hairaan -o-Kharaab

Kiss   Liay   Mast   Ko   Sarshaar   Ko    Daikha   Hay

 Na   Huay   Qaid   Magar   Phans   Gaey   Zanjeeron   Men

Haaey   Kiun   Zulf   K   Uss   Taar   Ko    Daikha   Hay

 Nargiss-e-Mast   Ki    Mehar   Uss   Ko   Milay   Gi   Beshak

Aa   K    Jab   MEHAR   Ko   Bemaar   Ko    Daikha   Hay

 Poet: Peer   Mehar   Ali   Shah

 

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -