پاکستان سفارتخانہ ویانا میں یوم سیاہ کشمیر کی یاد میں ویبنار کا انعقاد کیا گیا

پاکستان سفارتخانہ ویانا میں یوم سیاہ کشمیر کی یاد میں ویبنار کا انعقاد کیا ...
پاکستان سفارتخانہ ویانا میں یوم سیاہ کشمیر کی یاد میں ویبنار کا انعقاد کیا گیا

  

ویانا(اکرم باجوہ) پاکستان سفارتخانہ ویانا میں یوم کشمیر کے موقع پر ایک ویبنار کا اہتمام کیا جس میں آسٹریا اور سلوواکیہ میں مقیم پاکستانی اور کشمیری باشندوں کے علاوہ میڈیا اور مقامی تھنک ٹینکس کے نمائندوں نے بھی شرکت کی۔

پاکستان سے پانچ ممتاز مقررین نے بطور پینلسٹ ویبینار میں شرکت کی۔ان میں کل جماعتی حریت کانفرنس اسلام آباد کے کنوینر سید فیض نقشبندی، انسٹی ٹیوٹ آف اسٹریٹجک اسٹڈیز اسلام آباد کے ڈائریکٹر ڈاکٹر سیف الرحمان ملک، سرگودھا یونیورسٹی کے سابق وائس چانسلر ڈاکٹر اشتیاق احمد، ڈاکٹر آمنہ محمود شامل تھے۔ بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی اسلام آباد میں سوشل سائنسز کے پروفیسر اور محترمہ مشعل حسین ملک ممتاز کشمیری رہنما اور جموں کشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین جناب محمد یاسین ملک کی اہلیہ شامل ہیں۔

 مقررین نے جموں و کشمیر کے تنازعہ کی مختلف جہتوں کو سامنے لایا۔ سید فیض نقشبندی نے بڑے پیمانے پر انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور ظالمانہ قوانین پر روشنی ڈالی جو کشمیریوں کی حق خودارادیت کی جدوجہد کو کچلنے کے لیے استعمال ہو رہے ہیں۔ ڈاکٹر سیف الرحمان ملک نے اگست 2019 کو بھارت کی طرف سے کی جانے والی غیر قانونی اور یکطرفہ کارروائی پر توجہ مرکوز کی جس نے بھارت کے غیر قانونی طور پر مقبوضہ جموں و کشمیر کے لوگوں کی حالت زار کو مزید بڑھا دیا تھا۔ ڈاکٹر اشتیاق احمد نے کہا کہ بھارت نے جموں و کشمیر کے تنازعہ کو کشمیری عوام کی خواہشات کے مطابق حل کرنے کی نیک نیتی کی کوششوں میں کبھی حصہ نہیں لیا۔ڈاکٹر آمنہ محمود نے نشاندہی کی کہ مقبوضہ جموں و کشمیر کے لوگوں پر مسلط دہشت گردی نے دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت ہونے کے ہندوستان کے کھوکھلے دعووں کو بے نقاب کر دیا ہے۔ محترمہ مشعال حسین ملک نے کہا کہ بے پناہ مصائب کے باوجود کشمیر کی خواتین کی ہمت اور عزم اٹوٹ ہے اور وہ کشمیریوں کی حق خود ارادیت کی جدوجہد کی چیمپئین ہیں انہوں نے کہا کہ ہندوستان میں بی جے پی کی حکومت مقبوضہ جموں و کشمیر کے لوگوں کو ان کی قیادت کو نشانہ بنا کر لیڈر سے محروم کرنے کی کوشش کر رہی ہے اور خطے کے آبادیاتی ڈھانچے کو تبدیل کرنے کے اقدامات بھی کر رہی ہے۔سفیر پث آفتاب احمد کھوکھر نے بھی ویبینار سے خطاب کیا اور پاکستان کے صدر وزیراعظم اور وزیر خارجہ کے کشمیر یوم سیاہ کے موقع پر قوم کے نام پیغامات پڑھ کر سنائے۔ انہوں نے مقبوضہ جموں و کشمیر کے بہادر عوام کی قربانیوں کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کی قیادت اور عوام حق خودارادیت کے لیے ان کی منصفانہ جدوجہد میں ان کی اخلاقی سیاسی اور سفارتی حمایت میں ثابت قدم رہے ہیں۔ انہوں نے ویبنار کے مقررین اور شرکاکا شکریہ ادا کیا جس کا مقصد 27 اکتوبر 1947 کے بھارتی اقدامات اور مقبوضہ جموں و کشمیر میں جاری ریاستی دہشت گردی کی مذمت کے ساتھ ساتھ بین الاقوامی برادری پر زور دینا تھا کہ وہ مقبوضہ جموں و کشمیر کے طویل المدت لوگوں کی حمایت میں آواز بلند کرے۔ اور انہیں ان کے ناقابل تنسیخ حق خود ارادیت کا استعمال کرنے کے قابل بنانے میں اپنا بھرپور کردار ادا کریں جیسا کہ انہیں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں میں ضمانت دی گئی ہے۔

مزید :

تارکین پاکستان -