ہلال احمر کے زیر اہتمام غلام اسحاق خان انسٹیٹیوٹ میں بلڈ کیمپ 

  ہلال احمر کے زیر اہتمام غلام اسحاق خان انسٹیٹیوٹ میں بلڈ کیمپ 

  

پشاور(سٹی رپورٹر) ہلال احمر کے زیر اہتمام ریجنل بلڈ ڈونر سنٹر نے غلام اسحاق خان انسٹی ٹیوٹ برائے انجنئیرنگ سائنس اینڈ ٹیکنالوجی ٹوپی صوابی میں خون کے عطیات جمع کرنے کے لئے ایک روزہ کیمپ کا انعقاد کیا،خون عطیہ دینے کے لیے طلبہ نے بڑھ چڑھ کر حصہ لیا۔ اس موقع پر 286 یونٹ عطیات جمع ہوئے۔اس عطیہ سے پلیٹلٹس،پلازمہ اور سرخ خلیوں کے 650 یونٹ بنائے گئے۔ اس موقع پر ہلال احمر کے چیئرمین ابرارا لحق نے کہا کہ حالیہ ڈینگی کے کیسوں میں اضافہ کے باعث متاثرہ افراد کو پلیٹلٹس کی ضرورت پڑتی ہے۔پلیٹلٹس فریش بلڈ سے ہی تیار کئے جا سکتے ہیں۔ ابرارالحق نے غلام اسحاق خان انسٹی ٹیوٹ برائے انجنیئرنگ سائنس اینڈ ٹیکنالوجی میں کیمپ کے انعقاد کو سراہتے ہوئے خون عطیہ کرنے والوں کو مبارکباد دی۔ان کا کہنا تھا کہ کورونا وبا کے باعث خون کے عطیات کے لیے کیمپ کا انعقاد قدرے مشکل ہو گیا تھا اور عطیات بہت کم ہوگئے تھے جب کہ ضرورت کہیں زیادہ ہے۔اس سے قبل ہلال احمر ماہانہ 5000 عطیات جمع کرتا تھا جو کہ کورونا وبا کے باعث کم ہوکر چند درجن رہ گئے تھے۔انہوں نے کہا کہ اب چونکہ کورونا کی صورتحال تشویشناک نہیں اور روزانہ کے کیس بھی کم ہو ہے ہیں اس لئے ہلال احمر ایسے کیمپس کاانعقاد معمول کے مطابق کرے گا۔انہوں نے نوجوانوں کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے اپیل کی کہ وہ آگے بڑھیں اور اس کار خیر میں بھر پور حصہ لیں۔انہوں نے کہاکہ خون عطیہ کرنا کار خیر بھی ہے اور اچھی صحت کی نشانی بھی۔ایک یونٹ خون سے ہم تین قیمتی جانیں بچا سکتے ہیں۔انہوں نے موومنٹ پارٹنرز  آئی سی آر سی،آئی ایف آر سی اور ایکو (ECHO) کی جانب سے ہلال احمرکی خون کے عطیات کی مہم میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینے کو بھی سراہا۔ان کا کہنا تھا کہ اب چونکہ تعلیمی ادارے مکمل طور پر کھل گئے ہیں تو اسی طرح کے کیمپس تمام تعلیمی اداروں میں بھی لگائے جائیں گے۔نوجوانوں کی خون کے عطیات کی مہم میں شمولیت ناگزیر ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -