کرپشن: وائس چانسلرڈاکٹر اطہر محبوب کو عہدے سے برطرف کرنیکی سفارش 

کرپشن: وائس چانسلرڈاکٹر اطہر محبوب کو عہدے سے برطرف کرنیکی سفارش 

  

رحیم یار خان(بیورو رپورٹ)اعلی سطحی انکوائری کمیٹی رپورٹ میں کرپشن اوربے ضابطگیوں پر ڈاکٹر اطہر محبوب کو وائس چانسلر اسلامیہ یونیورسٹی کے عہدے سے فی الفور برطرف کرکے اینٹی کرپشن سمیت پولیس میں مقدمہ درج کروانے کی سفارشات کی گئی ہیں (بقیہ نمبر44صفحہ7پر)

 وزیر ہائرایجوکیشن کے دستخط کے بعد رپورٹ گورنر پنجاب کو بھجوادی گئی۔ذرائع کے مطابق خواجہ فرید یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ انفارمیشن ٹیکنالوجی رحیم یار خان میں بڑے پیمانے پر ہونیوالی مالی بے ضابطگیوں اور کرپشن کی تحقیقات کیلئے وائس چانسلر ڈاکٹر اطہر محبوب اور دیگر کے خلاف جامعہ کی 5ویں میٹنگ مورخہ16جولائی 2020 کوسینڈیکٹ کے اجلاس میں اعلی سطحی تحقیقاتی کمیٹی کی منظوری دی گئی۔ذرائع کے مطابق اس کمیٹی میں مظہر علی خان (سابق وفاقی سیکرٹری)کنوینئر،ڈاکٹر فضل احمد خالد (چیئرمین پنجاب ہائر ایجوکیشن کمیشن)ڈاکٹر شعیب انور (سابق ایڈیشنل سیکرٹری)ہائرایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ اور محمد انیس شیخ (ڈپٹی سیکرٹری آڈٹ) ہائر ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ پر مشتمل کمیٹی کا نوٹیفکیشن جاری کیا گیا۔ذرائع کے مطابق کمیٹی نے ایک سال خواجہ فرید یونیورسٹی کے تمام معاملات کی گہرائی تک جانچ پڑتا ل کرنے کے بعد سینڈیکٹ میں دی جانیوالی رپورٹ میں کہا کہ یہ انتہائی افسوسناک امر ہے کہ ڈاکٹر اطہر محبوب نے اپنے چار سالہ دور میں بطور وائس چانسلر خواجہ فرید یونیورسٹی مالی،انتظامی اور تعلیمی مشنری کو سبوتاژ رکھا لیکن تمام تر ثبوتوں کے باوجود انہیں ملک کی ایک بڑی جامعہ اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کا وائس چانسلر تعینات کر دیا گیا۔کمیٹی نے اپنی رپورٹ میں انکشاف کیا ہے کہ ڈاکٹر اطہر محبو ب کے ساتھ کرپشن میں ملوث عبدالصمد (سابق خزانچی)اور بلال ارشاد(سابق رجسٹرار)اب اسلامیہ یونیورسٹی میں بھی ان کی ٹیم کا حصہ ہیں۔ذرائع کے مطابق کمیٹی نے اپنی سفارشات میں وائس چانسلر اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور ڈاکٹر اطہر محبوب کو ان کے عہدے سے برطرف کرنے سمیت ڈاکٹر اطہر محبوب، عبدالصمد (سابق خزانچی)اور بلال ارشاد(سابق رجسٹرار)کے خلاف اینٹی کرپشن میں کیس فائل کرنے اور دس ملین روپے کے فراڈ پر پولیس میں مقدمہ درج کروانے کی سفارش کی۔ذرائع کے مطابق صوبائی وزیر ہائرایجوکیشن پنجاب راجہ یاسرہمایوں سرفراز کی زیر صدارت سینڈیکٹ کے اجلاس میں منظوری کے بعد ہائی پاور کمیٹی کی رپورٹ گورنر پنجاب /چانسلر کو بھجوادی گئی ہے۔ ذرائع کے مطابق چانسلر/گورنرپنجاب کو رپورٹ بھجوانے کے بعد وائس چانسلر ڈاکٹر اطہر محبوب کی جانب سے معاملے کو دبانے کیلئے ہنگامی بنیادوں پر کوششیں شروع کر دی گئی ہیں۔ذرائع کا کہنا ہے کہ وائس چانسلر ڈاکٹر اطہر محبوب خود کو گورنر پنجاب چوہدری سرور کے ساتھ ذاتی روابط اور مراسم کے دعویدار ہیں اور اس معاملے کو گورنر پنجا ب کی جانب سے سفارشات پر عمل درآمد رکوانے کیلئے خاصے پر اعتماد ہیں۔ترجمان خواجہ فرید یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ انفارمیشن ٹیکنالوجی رحیم یار خان نے اس حوالے سے ہائی پاور کمیٹی کی سفارشات سینڈیکٹ میں پیش ہونے اور معاملہ گورنر پنجاب کو بھجوانے کی تصدیق کی ہے۔

متوقع

مزید :

ملتان صفحہ آخر -