کشمیر عالمی سطح پر تسلیم شدہ متنازعہ علاقہ ہے،کشمیر ی قیادت

کشمیر عالمی سطح پر تسلیم شدہ متنازعہ علاقہ ہے،کشمیر ی قیادت

  

سرینگر (اے پی پی) مقبوضہ کشمیر میں حریت رہنما اور جموں و کشمیر ڈیموکریٹک پولیٹیکل موومنٹ کے چیئرمین فردوس احمد شاہ نے کہاہے کہ چھ دہائیوں سے زائد کا عرصہ گزرنے کے باوجود کشمیریوں کوانکا ناقابل تنسیخ حق، حق خود ارادیت نہیں مل سکا ہے۔کشمیر میڈیا سروس کے مطابق فردوس احمد شاہ نے سرینگر میں جاری بیان میں بھارتی وزیر اعظم کی طرف سے نیویارک میں دیے گئے حالیہ بیان کی مذمت کی جس میں انہوں نے کشمیر کو بھارت کا اٹوٹ انگ قرار دیا تھا۔ انہوںنے من موہن سنگھ کو یاد دلایا کہ یہ بھارت کے پہلے وزیر اعظم پنڈت جواہر لال نہرو ہی تھے جو مسئلہ کشمیر کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں لے گئے تھے۔فردوس احمد شاہ نے کہا کہ بھارت نے کشمیریوں کی خواہشات کے خلاف جموں و کشمیر پر قبضہ کر رکھا ہے اور وہ طاقت کے وحشیانہ استعمال کے ذریعے انکی تحریک آزادی کو دبانے کی کوشش کر رہا ہے۔ جموںو کشمیر ماس موومنٹ کی سرپرست فریدہ بہن جی نے سرینگر میں جاری بیان میں من موہن سنگھ کے بیان کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ کوکشمیر کے حوالے سے اپنی قراردادوں پر عمل درآمد کرانا چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ بھارت مسئلہ کشمیر کو کشمیریوںکی خواہشات کے مطابق حل نہیں کرنا چاہتاجس سے پورے خطے کے امن کو خطرہہے۔دریںاثناءبزرگ کشمیری حریت رہنما سید علی گیلانی کی سرپرستی میں قائم فورم کی آزادکشمیر شاخ کے ترجمان پرویز احمد شاہ نے کہا ہے کہ بھارت مسئلہ کشمیر کو طول دیکر جنوبی ایشیا میں پائیدار امن نہیں چاہتا۔ پرویز احمد شاہ نے اسلام آباد میں جاری بیان میں بھارتی وزیر اعظم من موہن سنگھ کے حالیہ بیان کی مذمت کی جس میں انہوںنے کہا تھا کہ کشمیر بھارت کا اٹوٹ انگ ہے۔ انہوںنے کہا کہ کشمیر عالمی سطح پر تسلیم شدہ ایک متنازعہ علاقہ ہے۔ پرویز احمد شاہ نے کہا کہ بھارت کے پہلے وزیر اعظم پنڈت جواہر لال نہرو 1948میں مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ میں لے گئے تھے اور وعدہ کیا تھا کہ کشمیری عوام کو انکا پیدائشی حق، حق خود ارادیت دیاجائے گا۔ انہوںنے کہا کہ من موہن سنگھ کے برعکس وزیر اعظم پاکستان محمد نواز شریف کی طرف سے جنرل اسمبلی میں کی گئی تقریر کو پوری دنیا نے سراہا۔ پرویر احمد شاہ نے کہا پاکستان مسئلہ کشمیر کا کشمیریوںکی خواہشات کے مطابق حل کا خواہاں ہے جبکہ بھارت کی جارحانہ پالیسیوں کی وجہ سے پورے خطے کا امن درہم برہم ہے۔ انہوں نے عالمی برادری سے اپیل کی کہ وہ اقوام متحدہ کی متعلقہ قراردادوں کے مطابق مسئلہ کشمیر کے حل میں کردار ادا کرے۔

مزید :

عالمی منظر -