52ہزار لیڈی ہیلتھ ورکرز کی مستقلی ،خادم پنجاب کا ایک اور انقلابی اقدام

52ہزار لیڈی ہیلتھ ورکرز کی مستقلی ،خادم پنجاب کا ایک اور انقلابی اقدام
52ہزار لیڈی ہیلتھ ورکرز کی مستقلی ،خادم پنجاب کا ایک اور انقلابی اقدام
کیپشن: 1

  

بیماریوں کے خلاف جدوجہد اور صحت کی سہولیات کی فراہمی میں پیرا میڈیکل سٹاف کا کردار خصوصی اہمیت کا حامل ہوتا ہے اور یہ سٹاف ڈاکٹرز کے ساتھ ملکر مریضوں کو طبی سہولیات کی فراہمی میں اہم کردار ادا کرتا ہے -لیڈی ہیلتھ ورکرز اور لیڈی ہیلتھ سپروائزرز بھی صحت عامہ کو برقرار رکھنے اور مختلف وبائی امراض خصوصا پولیو،ڈینگی کے خلاف جنگ اور ماں بچے کی صحت اور ہیلتھ ایجوکیشن جیسے اہم طبی پروگراموں کی کامیابی کیلئے ایک لازمی حصہ ہیں-لیڈی ہیلتھ ورکرز ،لیڈی ہیلتھ سپروائزر اور دیگر سٹاف کو ریگولر کیا جانا اس شعبے سے وابستہ افراد کا ایک دیرینہ مطالبہ تھا جس کو مسلم لیگ (ن) کی پنجاب حکومت نے پورا کیا ہے -

وزیراعلیٰ محمد شہباز شریف نے انقلابی اقدام اٹھاتے ہوئے صوبہ پنجاب میں 52 ہزار لیڈی ہیلتھ ورکرز ، لیڈی ہیلتھ سپروائزرز، ڈرائیورز اور دیگر عملے کو ریگولر کر دیاہے- وزیراعلیٰ نے ریگولر ہونے والی لیڈی ہیلتھ ورکرز ، لیڈی ہیلتھ سپروائزرز اور دیگر عملے کو اکتوبر کی تنخواہ نئے گریڈ سے دےنے کا اعلان بھی کیا ہے- وزیراعلیٰ محمد شہبازشریف کی زیرصدارت گزشتہ دنوں لیڈی ہیلتھ ورکرز ،لیڈی ہیلتھ سپروائزرز ،ڈرائیورز اور دیگر عملے کو ریگولر کئے جانے کے حوالے سے تقریب منعقد ہوئی ۔ وزیراعلیٰ نے لیڈی ہیلتھ ورکرز ،لیڈی ہیلتھ سپروائزرز اور دیگر عملے کو ریگولر ہونے کے حوالے سے لیٹرز دئےے اور انہیں مبارکباد دی -وزیراعلیٰ محمد شہبازشریف نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ آج خوشی کا دن ہے کہ لیڈی ہیلتھ ورکرز اور لیڈی ہیلتھ سپروائزر ز کو ریگولرکرنے کا دیرینہ مطالبہ پورا ہوا ہے اور اب وہ زیادہ سکون ، اعتماداور اطمینان سے اپنے فرائض سر انجام دیں گی اور انہیں سرکاری مراعات بھی حاصل ہوں گی-میںپنجاب بھر میں ریگولر ہونے والی 52 ہزار لیڈی ہیلتھ ورکرز ، لیڈی ہیلتھ سپروائزر اور دیگر متعلقہ عملے کو دل کی گہرائیوں سے مبارکباد دیتا ہوں۔ بلاشبہ ےہ صرف 52ہزار ملازمین ہی نہیں بلکہ 52ہزار خاندان ہیں جو اس سے مستفید ہوںگے -انہوں نے کہاکہ لیڈی ہیلتھ ورکرز ماں اور بچے کی صحت اور وبائی ا مراض کی روک تھام کے لئے مقدس فریضہ سر انجام دے رہی ہیں،اپنے خاندان کا بوجھ بانٹتی ہیں -ریگولر ہونا ان کا حق تھا جو انہیں لوٹا دیاگیا ہے -

وزیراعلیٰ محمد شہبازشریف نے کہاکہ ڈینگی ، پولیو ،ماں اور بچے کی صحت اور دیگر وبائی امراض کی روک تھام میں لیڈی ہیلتھ ورکرز کی کاوشیں لائق تحسین ہیں-ضرورت اس امر کی ہے کہ لیڈی ہیلتھ ورکرزکے لئے مربوط تربیتی پروگرام اور ریفریشر کورسز کا اہتمام کیاجائے تاکہ وہ جدید تربیت سے آراستہ ہو کر میدان عمل میں نکلیں -انہوں نے کہاکہ لیڈی ہیلتھ ورکرزاور لیڈی ہیلتھ سپروائزر کی صورت میں ہمارے پاس بڑا ہیومن ریسورس موجود ہے او روبائی امراض کی روک تھام کے حوالے سے اس سے بھر پور استفاد ہ کرنے کی ضرورت ہے - انہوںنے کہاکہ لیڈی ہیلتھ ورکرزسیلاب زدہ علاقوں پر توجہ دیں او روہاں ماں اور بچے کی صحت اور وبائی امراض کی روک تھام کے حوالے سے اپنا بھرپور کردار ادا کریں-اﷲ تعالیٰ کا شکر اداکرنے اور اپنی خوشی منانے کا بہترین طریقہ یہی ہے کہ مصیبت کی گھڑی میں سیلاب زدگان کی مدد کی جائے-لیڈی ہیلتھ ورکرزاپنے فرائض محنت ،جانفشانی او رایمانداری سے سرانجام دیں ان کے تمام جائز مطالبات پورے کئے جائیں گے -انہو ںنے کہاکہ پنجاب میں سیلاب نے بے پناہ تباہی مچائی ہے ،لاکھوں لوگ بے گھر ہو چکے ہیں -ہمیں چاہےے کہ عید سیلاب زدگان کے ساتھ گزاریں او را نہیں اپنی خوشیوں میں شامل کریں-

وزیر اعلی نے اس موقع پر اپنے خطاب میںکہا کہ ملک کومسائل ، مشکلات اور بحرانوں سے نکالنا ہم سب کی اجتماعی ذمہ داری ہے -ملک کو ترقی و خوشحالی کی منزل سے ہمکنارکرنے کا واحد راستہ ےہی ہے کہ ذاتی انا ، رنجش اور ذاتی مفادات سے بالا تر ہو کر ملک کے استحکام کے لئے مل کر کام کیا جائے -امیر او رغریب کے درمیان خلیج ختم کر کے وسائل کی منصفانہ تقسیم یقینی بنانا ہوگی-ورنہ ایسا انقلاب آئے گا جو سب کو خس و خاشاک کی طرح بہا لے جائے گا-انصاف پر مبنی معاشرہ قائم نہ ہوا اور غریب کو اس کا حق نہ ملا تو ایسا سیلاب آئے گا کہ سب اسی میں بہہ جائیں گے -میں پہلے بھی کہتا رہاہوں او راب بھی کہتا ہوں کہ انصاف پر مبنی معاشرہ قائم کرنا ہوگا- غریب سے نفرت اور اسے نظر انداز کر کے اشرافیہ کے ساتھ کھڑے ہو کر انقلاب نہیں لایا جا سکتا-انہوں نے کہاکہ حکومت نے عوام کو ترقی وخوشحالی کی منزل کی جانب جونہی پیش قدمی کی تو بد قسمتی سے حالیہ بحران پیدا کیا گیا جس کی وجہ سے ترقی اورمعیشت کو نا قابل تلافی نقصان پہنچا ہے اور لوگوں کے سہانے خواب ٹوٹے ہیں - میری اپیل ہے کہ ابھی بھی وقت ہاتھ سے نہیں نکلا ،ہم سب کو مل کر ملک کو آگے لے کر جانا ہے-ےہی راستہ ہے جس پر چل کر پاکستا ن کو دوبارہ عزت و توقیر دلائی جا سکتی ہے -

 آج خود ساختہ بحران پیدا کیا جا رہاہے جس کی وجہ سے ترقی و خوشحالی کی راہ میں رکاوٹ اور سہانے خواب کی تعبیر میں مشکل پیش آرہی ہے -انہوں نے کہاکہ آج امیر اور غریب کے درمیان خلیج وسیع ہو رہی ہے -ایک طرف اشرافیہ کی دہلیز پر تمام سہولتیں سلام کرتی ہیں تودوسری طرف غریب کے لئے زندگی تنگ سے تنگ ہے اور ےہ لکیر دن بدن مزید گہری ہورہی ہے - ناعاقبت اندیش رویوں پر فوری نظر ثانی کی ضرورت ہے اور اس بڑھتی ہوئی خلیج کو دور کرنے کے لئے اقدامات کرنا ہوں گے-اگر خدانخواستہ انقلاب آیا تو غریب اپنا حق لینے کے لئے اےسے اٹھیں گے کہ پھر عالیشان محلات بھی نہیں رہیں گے اور اصل انقلاب ےہ ہوگا جو امیروں کو سیلاب کی طرح بہا لے جائے گا-اس دن سے بچنے کے لئے اﷲ تعالیٰ کے دئےے گئے نظام پر عمل کرتے ہوئے معاشرے میں انصاف اورمساوات کو قائم کرناہوگاورنہ تاریخ کسی کو معاف نہیں کرے گی-مشیر برائے صحت خواجہ سلمان رفیق نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ پنجاب حکومت کی جانب سے 52ہزار لیڈی ہیلتھ ورکرز، لیڈی ہیلتھ سپروائزر اور دیگر عملے کو مستقل کر دیا گیاہے -جس سے ان ملازمین میں اعتماد آئے گااور وہ مزید لگن اور جذبے کے ساتھ اپنے فرائض سر انجام دیں گے-ےہ اہم سنگ میل ہے جس سے ہزاروں خاندانوں کے خواب پورے ہوئے ہیں-پارلیمانی سیکرٹری برائے صحت خواجہ عمران نذیر ، سیکرٹری صحت اور ڈی جی ہیلتھ سروسز بھی تقریب میں موجود تھے -

لیڈی ہیلتھ ورکرز، لیڈی ہیلتھ سپر وائزر ز اور دیگر متعلقہ عملے کو ملازمت کے ریگولرلیٹرز دےنے کی تقریب میں مستقل ہونے والے ملازمین نے زبردست الفاظ میں وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہبازشریف کو خراج تحسین پیش کیا-صدر لیڈی ہیلتھ ورکرز ایسوسی ایشن پنجاب رخسانہ انور نے کہاکہ شہبازشریف وزیراعلیٰ نہیں بلکہ حقیقی معنو ںمیں خادم اعلیٰ ہیں -انہوں نے ہمارے خوابوں کو تعبیر دی ہے ،ہماری ملازمت کو ریگولر کر کے ہمارے سر فخر سے بلند کر دئےے ہیں۔ بلاشبہ آج کا دن ہمارے لئے عید سے بڑھ کر خوشیاں لایا ہے -میرے پاس شہبازشریف کا شکرےہ ادا کرنے کے لئے الفاظ نہیں -وہ خواتین کو با اختیار بنانا چاہتے ہیں او رانہو ںنے لیڈی ہیلتھ ورکرزکو ریگولر کر کے انسانی ہمدردی کا ثبوت دیاہے-انہوںنے کہاکہ وزیراعلیٰ نے 52 ہزار لوگوں کو نہیں 52ہزار خاندانوں کو ریگولر کر دیاہے۔ جب تک ےہ خاندان زندہ ہیں، ان کی درازی عمراورصحت کے لئے دعا گو رہےں گے - انہوں نے کہاکہ شہبازشریف نے ہمیں محنت کرنے کا درس دیاہے ۔ہم پنجاب سے پولیو کا نام و نشان مٹا دیں گے اور وبائی امراض کی روک تھام کے لئے محنت ، لگن اور جذبے سے کام کریں گے ،جہاں ضرورت ہوگی ہر اول دستے کا کردارادا کریں گے - انہوںنے کہاکہ ڈینگی کے خاتمے میں شہبازشریف کا جنون شامل تھا اور ےہی وجہ ہے کہ آج پنجاب میں ڈینگی کا نام ونشان نہیں - نسرین منور نے کہاکہ شہبازشریف کی بدولت ہی ہمیں آج ےہ خوشی کا دن دیکھنا نصیب ہواہے -

مزید :

کالم -