دانتوں کے درد کے ہربل نسخے

دانتوں کے درد کے ہربل نسخے
دانتوں کے درد کے ہربل نسخے

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک)مسوڑھوں کی بیماری منہ سے متعلق ایک عام بیماری ہے جو نا صرف عمر رسیدہ اشخاص بلکہ بچوں کو غیر صحت مند اشیا کھانے کی وجہ سے متاثر کرتی ہے۔دانتوں کی صحیح طور پر صفائی نہ ہونا، برش کرنا،دانتوں کے خلال اور ماﺅتھ واش استعمال کرنے کے باوجود مسوڑھوں کی بیماریوں کو بڑھاوا دیتا ہے۔ذیل میں پانچ جڑی بوٹیوں کا ذکر کیا جا رہا ہے جو مسوڑھوں کی تمام بیماریوں کا شافی علاج ہیں۔

نیم

 دیہی انڈیا میں نیم کی مسواک دانتوں کی صفائی کا ایک پرانا طریقہ ہے اور منہ کی صفائی کے حوالے سے نیم پر بہت زیادہ انحصار کیا جاتا ہے کیونکہ نیم میں جراثیم اور پھپھوندی کش اجزا پائے جاتے ہیں لہٰذا نیم کی افادیت طبی لحاظ سے ثابت ہے۔نسیم کے چند پتے گرم پانی میں ابال کر دن میں تین چار بار غرارے کرنا مسوڑوں اور دانتوں کے امراض میں فائدہ دیتا ہے۔

ملیٹھی

 ملیٹھی کی جڑوں میں دو ضروری مرکبات Licoricidinاور Licorisoflavinپائے جاتے ہیں جو دانتوں کے خلاءمیں جراثیم کی پیداوار کو روکتے ہیں اور بدبودار سانسوں کے خلاف نبردآزما رہتے ہیں۔دانتوں کی بیماریوں کو ایک ہاتھ کے فاصلے پر رکھنے کے لئے ایک چٹکی ملٹھی سفوف کی لے کر متاثرہ دانت پر رکھیں یا روزانہ اس سفوف سے دانت برش کریں۔

تلسی

 تلسی کے پتے اپنی طبی خصوصیات کی بدولت جانے جاتے ہیں۔قدرتی جراثیم کش اثرات کی حامل تلسی دانتوں اور مسوڑھوں کی بیماریوں میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔چونکہ تلسی کو ایک طاقتور جراثیم کش دوا کے طور پر استعمال کیا جانا چاہیے۔تلسی کا استعمال دانتوں کے پلاک اور بدبو دار سانسوں میں مفید ہے۔چند تلسی کے پتے روزانہ باقاعدگی سے چبائیں۔

گوگل

گوگل بہت سی آیورویدک ادویہ کا حصہ ہوتا ہے کیونکہ اس میں بہت سی خصوصیات پائی جاتی ہیں اس میں سوزش کم کرنے والے اثرات موجود ہیں اور جراثیم کی پیداوار کو روکتی ہے اور پلاک کا خاتمہ کرتی ہے۔گوگل کا سفوف آدھ چمچ پانی میں حل کرکے غرارے کریں اور دانتوں کی بیماریوں سے دور رہیں۔

لونگ

مسوڑھوں کی بیماریوں میں لونگ بہترین کردار ادا کرتے ہیں۔اس میں کیمیائی جز Euginolپایاجاتا ہے جو بہترین جراثیم کش اور ورم دور کرنے والے اثرات کا حامل ہے۔ متاثرہ دانت یا مسوڑے پر لوگ کا تیل لگانے سے درد اور ورم سے نجات ہوتی ہے لونگ کو ایک طاقتور اینٹی سیپٹک کے طور پر استعمال کیا جانا چاہیے۔

مزید :

تعلیم و صحت -