قرضوں کا بڑھتا ہوا بوجھ اور کرپشن ملکی سلامتی کیلئے خطرہ بن سکتے ہیں

قرضوں کا بڑھتا ہوا بوجھ اور کرپشن ملکی سلامتی کیلئے خطرہ بن سکتے ہیں

  

کراچی: تجزیہ مبشر میر

قرضوں کا بڑھتا ہوا بوجھ،کرپشن میں اضافہ اور ٹیکس چوری ملکی سلامتی کے لیے سب سے بڑا خطرہ ثابت ہوسکتا ہے ۔آپریشن ضرب عضب اور دہشت گردوں کے خلاف کامیابیوں کو روکنے کے لیے ملک دشمن قوتیں پاکستان کو دیوالیہ کرنے کی کوشش کریں گی ۔پاکستان کے وفاقی بجٹ کا ایک بڑا حصہ قرضوں اور سود کی ادائیگی کی اقساط کی مد میں خرچ ہورہا ہے اور حکومت مزید قرضے حاصل کررہی ہے ۔حال ہی میں آئی ایم ایف نے 500ملین ڈالر کی قسط ادا کرنے کی حامی بھری ہے لیکن غیر ترقیاتی کاموں کے لیے لیے جانے والے ملکی اور غیر ملکی قرضے معیشت پر ایک بڑے بوجھ کی مانند نظر آنا شروع ہوگئے ہیں ۔اس بات کا خدشہ ظاہرہورہا ہے کہ مستقبل قریب میں پاکستان کو یونان جیسی کیفیت سے دوچار کردیا جائے ۔پاکستان کا اقتصادی دیوالیہ ہونا ملکی سلامتی کے لیے زہر قاتل ہوگا ۔پاکستان کو کمزور کرنے اور توڑنے کے لیے جو جال بچھایا گیا تھا وہ سازش دم توڑتی دکھائی دے رہی ہے کیونکہ دہشت گردوں کے خلاف آپریشن کامیابیوں سے ہمکنار ہورہا ہے اب پاکستان دشمن قوتیں اقتصادی حملے کی سازش میں مصروف ہیں ۔کرپشن کا خاتمہ اور ٹیکس چوری روکے بغیر ملکی سلامتی کے تقاضے پورا کرنا ممکن نہیں ہوسکے گا ۔

مزید :

تجزیہ -