ملزموں سے ملاقات نہ کرانے پر سابق وزیر کاڈسٹرکٹ جیل ملتان پردھاوا

ملزموں سے ملاقات نہ کرانے پر سابق وزیر کاڈسٹرکٹ جیل ملتان پردھاوا

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


ملتان(کرائم رپورٹر)ڈسٹرکٹ جیل ملتان میں قید نیب کی جانب سے میگاپراپرٹی کیس کے ملزموں سے ملاقات نہ کرانے کا رنج،سابق وزیر جیل خانہ جات نے اپنے بھائی مشیر جیل خانہ جات کے ہمراہ ڈسٹرکٹ جیل ملتان پر دھاوا بو ل دیا۔سپر نٹنڈنٹ جیل کے ساتھ بدتمیزی اور تبادلے کی دھمکیاں ،ڈی آئی جی جیل خانہ جات نے معاملہ رفع (بقیہ نمبر43صفحہ12پر )
دفع کروایا۔باوثوق ذرائع کے مطابق دو روز قبل سابق صو بائی وزیر جیل خانہ جات چوہدری عبدالوحید آرائیں اپنے بھائی مشیر جیل خانہ جات چوہدری ارشد آرائیں کے ہمراہ گزشتہ روز پولیس پروٹوکول کے ساتھ ڈسٹرکٹ جیل پہنچے اور جیل کے اندرداخل ہو تے ہی جیل اہلکاروں اور جیل کے اعلیٰ افسران کے خلاف نازیبا الفاظ کا ستعمال کیا ۔ ڈپٹی سپر ٹینڈ نٹ جاوید اقبال نے کہ آپ نازیبا الفاظ کا استعمال نہ کریں جس پر سابق صوبائی وزیر نے اسے تبادلے کی دھمکی۔بعدازاں تمام جیل کا معائنہ کرنے کے بعدسپر نٹنڈنٹ ڈسٹرکٹ جیل ملک آصف عظیم کے دفتر داخل ہوئے اور ان کے ساتھ بھی تلخ کلامی کی ذرائع کا کہنا ہے کہ سابق صوبائی وزیر نے سپرینٹنڈنٹ ڈسٹرکٹ جیل ملک آصف عظیم کو کہا کہ میرے ریفرنس سے بھیجے گئے لوگوں کو آپ ملاقات نہیں کرنے دیتے اور اپنی من مانی کرتے ہو۔میں تمہارا تبادلہ کروا دوں گا۔جس پر ملک آصف عظیم نے انہیں کہا کہ ملاقاتوں کا شیڈول مرتب شدہ ہے ،اور اس پر عملدرامد جاری ہے۔جس پر سابق صوبائی وزیر عبدالوحید آرائیں سیخ پا ہو گئے اور نازیبا الفاظ استعمال کیے سپرینٹنڈنٹ ڈسٹرکٹ جیل ملک آصف عظیم نے ڈی آئی جی جیل خانہ جات شوکت فیروز ڈسٹرکٹ جیل پہنچ کر معاملہ رفع دفع کروایا ۔سپرینٹنڈنٹ جیل ملک آصف عظیم سے رابطہ کیا گیا توانہوں نے موقف اختیار کیا کہ آئی جی جیل خانہ جات نے حکم دیا ہے کہ نیب کے کیسوں میں ملوث اسیران کی ملاقات کے لیے ایک دن مقرر کیا جائے ،جس پر انہوں نے سوموار کا دن مقرر کیا ہے۔اس کے باوجود انہیں سیاسی شخصیات کی جانب سے دباؤ ڈالا جاتا ہے کہ وہ سوموار کے علاوہ بھی ملاقاتیں کروائیں۔