برطانیہ میں بچے کیساتھ بد فعلی: عدالت نے بھارتی امام مسجد کو 6سال قید کی سزا سنادی ،نام جنسی مجرموں کی فہرست میں شامل کرنے کا حکم

برطانیہ میں بچے کیساتھ بد فعلی: عدالت نے بھارتی امام مسجد کو 6سال قید کی سزا ...
برطانیہ میں بچے کیساتھ بد فعلی: عدالت نے بھارتی امام مسجد کو 6سال قید کی سزا سنادی ،نام جنسی مجرموں کی فہرست میں شامل کرنے کا حکم

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

لندن(عرفان الحق)برطانیہ کی عدالت نے بچے سے جنسی زیادتی کرنے والے بھارتی امام مسجد کو 6سال قید کی سزا سنا دی ۔

تفصیلات کے مطابق برطانیہ کی مقامی عدالت نے واروک شائر کے علاقہ رگیی کی مسجد کے ٹوائلٹ میں شاگرد سے بد فعلی کرنے پر30سالہ نور ولی نامی بھارتی امام مسجد کو قید کی سزا سناتے ہوئے مستقبل میں بچوں کے ساتھ کام کرنے سے روک دیا اور اس کا نام جنسی مجرم کی فہرست میں درج کرنے کا حکم دیدیا۔
ذرائع کا کہنا ہے کہ امام مسجد نور ولی نے 2010ءمیں بچے کے ساتھ بد فعلی کی جس کے بعد بچے نے اپنے والدین کو اس بارے میں آگاہ کیا تاہم شور اٹھنے پر علاقے کے معززین نے ملزم کوواپس بھارت بھیج دیا تھا ،بعدازاںخفیہ طریقے سے واپس برطانیہ آنے پر پولیس نے امام مسجد کو گرفتار کرلیا ۔
ذرائع کا مزید کہنا تھا کہ لامام مسجد نے ایک سال کے بعد دوبارہ خفیہ طریقے سے واپس برطانیہ آکرلیسٹر کے علاقے میں رہنا شروع کردیاجس کی نوجوان نے پولیس کو اطلاع دیکر ملزم کو گرفتار کروادیاجہاں آج اس کے کیس واروک کی کروان کورٹ میں سماعت ہوئی جس میں امام مسجد نے اپنے جرم کا اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ مجھے معاف کردیں میں نے یہ جرم کیا ہے جبکہ جج کی طرف سے یہ ریمارکس دئے گئے کہ یہ شخص کمیونٹی کے لئے خطرہ ہے ۔
پروسیکیوٹر کی طرف سے معزز عدالت کو بتایا گیا کہ یہ شخص2010 ءمیں امام مسجد تھا اور اس کی ڈیوٹی بچوں کو تعلیم دینا تھی اور عدالت کو یہ بھی بتایا گیا کہ بد فعلی کے بعد جب امام مسجد بچے کے گھر گیا تو بچہ گھر سے بھاگ گیا اور اس نے کہا کہ اب وہ کبھی مسجد نہیں جائیگا۔جب بچے کے والدین نے کچھ معززین سے اس حوالہ سے رابطہ کیا تو انہوں نے مشورہ دیا کہ بچے کے کپڑے سنبھال لیں اور انہیں دھوئیں نہیں۔
ایک آفیسر کی طرف سے بتایا گیاکہ جب امام مسجد کو گرفتار کیا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ انہیں کچھ یاد نہیں ہے بس اس پر شیطان غالب آگیا تھا۔امام مسجد نے بتایا کہ اس نے بہت برا کام کیا ہے تاہم اس واقعے کے بعد وہ انڈیا واپس چلا گیا تھا لیکن اسے واپس آنا پڑا کیوں کہ اس کی بیوی برطانوی شہری ہیں۔
عدالت کو یہ بھی بتایا کہ امام مسجد اپنے کئے پر شرمندہ ہے جس پر جج کا کہنا تھا کہ آپ جیسے لوگوں پر نوجوان بچوں کو تعلیم دینے جیسی اہم ذمہ داری ہے اور کمیونٹی آپ پر اعتماد کرتی ہے۔

مزید :

برطانیہ -