اپنی غلطی پر امریکہ پچھتانے لگا، سعودی عرب کے پاﺅں پڑنے کو تیار

اپنی غلطی پر امریکہ پچھتانے لگا، سعودی عرب کے پاﺅں پڑنے کو تیار
اپنی غلطی پر امریکہ پچھتانے لگا، سعودی عرب کے پاﺅں پڑنے کو تیار

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

ریاض(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکی سینیٹ اور کانگریس نے صدر باراک اوباما کا ویٹو مسترد کرتے ہوئے اپنے اہم ترین اتحادی سعودی عرب کے خلاف ”جسٹس اگینسٹ سپانسرز آف ٹیررازم ایکٹ“ نامی بل تو منظور کر لیا مگر اگلے ہی روز انہیں جان کے لالے پڑ گئے ہیں اور وہ اپنے کیے پر پچھتانے لگے ہیں۔ اب بل کی منظوری دینے والے اراکین کانگریس و سینیٹ نے ہی اس اقدام کو احمقانہ حرکت قرار دے ڈالا ہے۔ عرب نیوز کی رپورٹ کے مطابق بل کی منظوری کے اگلے روز ہی امریکی کانگریس اور سینیٹ کے اراکین اس پر تحفظات کا اظہار کرنے لگے ہیں۔ سینیٹ اور کانگریس کے ری پبلکن اراکین نے سارا الزام صدر باراک اوباما پر عائد کر دیا ہے اور کہا ہے کہ وہ انہیں مناسب طریقے سے اعتماد میں لینے میں ناکام رہے۔ یہی وجہ ہے کہ انہوں نے اس بل کے حق میں ووٹ دے دیا۔ ان اراکین کا کہنا تھا کہ ہمیں اس غلطی کے ازالے کے لیے اس بل کی اصلاح کرنی چاہیے۔

”کسی انسان کے پاس یہ حق نہیں کہ وہ۔۔۔“ سعودی علماءنے ایسا فتویٰ دے دیا کہ جان کر آپ بھی داد دیں گے
سینیٹ کے رکن میک مک کونیل نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ”میرے خیال میں ہمیں اس بل کی منظوری کے سنگین نتائج بھگتنے پڑیں گے مگر اب اس پر بات کرنا فضول ہے۔“ ہاﺅس سپیکر پاﺅل ریان کا کہنا تھا کہ ”کانگریس کو ہر حال میں اس بل کی اصلاح کرنی چاہیے تاکہ امریکی مفادات کو زد نہ پہنچے۔“سینیٹ کمیٹی برائے خارجہ امور کے چیئرمین سینیٹر باب کروکر کا کہنا تھا کہ ”میرے خیال میں اس بل کی اصلاح 8نومبر کے الیکشن کے بعد کی جا سکتی ہے۔“ باب کروکر نے وائٹ ہاﺅس پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ”میں نے اس بل کی منظوری سے قبل انتظامیہ کے ساتھ مل کر کام کرنے کی کوشش کی تاکہ بل میں موجود سقم دور کیے جا سکیں لیکن وائٹ ہاﺅس انتظامیہ نے ملاقات سے ہی انکار کر دیا تھا۔“

مزید :

عرب دنیا -