جنگل سے آگے نکل گیا 

جنگل سے آگے نکل گیا 
جنگل سے آگے نکل گیا 

  

جنگل سے آگے نکل گیا 

وہ دریا کتنا بدل گیا 

کل میرے لہو کی رم جھم میں 

سورج کا پہیا پھسل گیا 

چہروں کی ندی بہتی ہے مگر 

وہ لہر گئی وہ کنول گیا 

اک پیڑ ہوا کے ساتھ چلا 

پھر گرتے گرتے سنبھل گیا 

اک آنگن پہلے چھینٹے میں 

بادل سے اونچا اچھل گیا 

اک اندھا جھونکا آیا تھا 

اک عید کا جوڑا مسل گیا 

اک سانولی چھت کے گرنے سے 

اک پاگل سایہ کچل گیا 

ہم دور تلک جا سکتے تھے 

تو بیٹھے بیٹھے بہل گیا 

جھوٹی ہو کہ سچی آگ تری 

میرا پتھر تو پگھل گیا 

مٹی کے کھلونے لینے کو 

میں بالک بن کے مچل گیا 

گھر میں تو ذرا جھانکا بھی نہیں 

اور نام کی تختی بدل گیا 

 شاعر: رئیس فروغ

(شعری مجموعہ"رات بہت ہوا چلی"  )

Jangal   Say   Aagay   Nikall    Gaya

Wo    Darya    Kitna   Badall  Gaya

Kall   Meray   Lahoo   Ki Rim   Jhim   Men

Soorj   Ka   Pahiyya   Phisal  Gaya

Chehron    Ki nadi   Behti   Hay   Magar

Wo   Lehr   Gai   Wo   Kawnal   Gaya

Ik   Paiirr   Hawa   K   Saath   Chala

Phir   Girtay   Girtay   Sanbhall   Gaya

Ik   Aangan   Pehlay   Chheentay   Men

Baadal   Say   Ooncha   Uchhall   Gaya

Ik   Andha   Jhaonka   Aaya   Tha

Ik   Eid   Ka   Joorra   Masal  Gaya

Ik   Saanwli   Chhat   K   Girnay   Say

Ik   Paagal   Saaya   Kuchall   Gaya

Ham   Door   Talak   Ja   Saktay   Thay

Too   Baithay   Baithay   Bahall   Gaya

Jhooti   Ho   Keh   Sachi   Aag   Tiri 

Mera    Pathar   To   Pigghal  Gaya

Mitti   K   Khilonay   Lenay   Ko

Main   Baalak   Ban   K    Machall   Gaya

Ghar   Men   To   Zaraa    Jhaanka   Bhi   Nahen

Aor   Naam   Ki   Takhti   Badall  Gaya

Poet: Rais   Farogh

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -