اک لمحۂ وصال تھا واپس نہ آسکا | رئیس وارثی |

اک لمحۂ وصال تھا واپس نہ آسکا | رئیس وارثی |
اک لمحۂ وصال تھا واپس نہ آسکا | رئیس وارثی |

  

اک لمحۂ وصال تھا واپس نہ آسکا

وہ وقت کی مثال تھاواپس نہ آسکا

ہر اک کو اپنا حال سنانے سے فائدہ

میرا جو ہم خیال تھا واپس نہ آسکا

شاید مرے فراق میں گھر سے چلا تھا وہ

زخموں سے پائمال تھاواپس نہ آسکا

شاید میں اس کو دیکھ کے سب کو بھلا ہی دوں

اُس کو یہ احتمال تھا واپس نہ آسکا

مجھ کو مرے وجود سے جو کر گیا جدا

کیسا وہ با کمال تھا واپس نہ آسکا

ہر دم رئیس وہ تو نظر کے ہے سامنے

تیرا تو یہ خیال تھا واپس نہ آسکا

شاعر: رئیس وارثی

(شعری مجموعہ" آئینہ ہوں میں":سال اشاعت؛دوسرا یڈیشن،2008  )

Ik   Lamha-e-Visaal   Tha   Waapas    Na    Aaa    Saka

Wo   Waqt   Ki   Misaal   Tha   Waapas    Na    Aaa    Saka

Har   Ik    Ko   Apna   Haal   Sunaanay   Say   Faaida

Mera   Jo   Ham   Khayaal  Tha   Waapas    Na    Aaa    Saka

Shayad    Miray   Fiaaq   Men   Ghar    Say   Chala   Tha   Wo

Zakhmon   Say    Paimaal   Tha   Waapas    Na    Aaa    Saka

Shayad    Main   Uss   Ko   Dekh   K   Sab   Kuchh   Bhula   Hi   Dun

Uss   Ko   Yeh   Ehtamaal   Tha   Waapas    Na    Aaa    Saka

Mujh   Ko   Miray   Wajood   Say   Jo   Kar    Gaya   Judaa

Kaisa   Wo   Bakamaal   Tha     Waapas    Na    Aaa    Saka

Har   Dam   RAEES   Wo   To   Nazar   K   Hay   Saamnay

Tera   To   Yeh   Khayaal   Tha     Waapas    Na    Aaa    Saka

Poet: Raees   Warsi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -