ہم نے خود اپنی رہنمائی کی  |راحت اندوری |

ہم نے خود اپنی رہنمائی کی  |راحت اندوری |
ہم نے خود اپنی رہنمائی کی  |راحت اندوری |

  

ہم نے خود اپنی رہنمائی کی 

اور شہرت ہوئی خدائی کی 

منزلیں چومتی ہیں میرے قدم 

داد  دیجیے شکستہ پائی کی

کھلے رہتے ہیں سارے دروازے 

کوئی صورت نہیں رہائی کی 

ٹوٹ کر ہم ملے ہیں پہلی بار 

یہ شروعات ہے جدائی کی 

میں نے دنیا سے، مجھ سے دنیا نے

سینکڑوں بار بے وفائی کی

زندگی جیسے تیسے کاٹنی ہے 

کیا بھلائی کی،  کیا برائی کی 

عشق کے کاروبار میں ہم نے 

جان دے کر بڑی کمائی کی 

شاعر: راحت اندوری

(شعری مجموعہ" ل٘محے لمحے":سال اشاعت؛2002  )

Ham   Nay   Kkhud   Apni    Rehnumaai   Ki

Aor   Shohrat   Hui   Khudaai   Ki

Manzlen   Choomti    Hen    Meray   Qadam

Daad   Dijiay   Shakista    Paai   Ki

Khulay   Rehtay  Hen    Saaray   Darwaazay

Koi   Soorat   Nahen   Rehaai   Ki

Toot   Kar    Ham    Milay   Hen   Pehli   Baar

Yeh   Shiruaat    Hay    Judaai   Ki

Main   Nay   Dunya   Say  ,   Mujh   Say   Dunya  Nay

Sainkarron   Baar   Be  Wafaai   Ki

Zindagi   Jaisay   Taisay   Kaatni  Hay

Kaya   Bhalaai   Ki  ,   Kaya   Bhalaai   Ki

Eshq   K   Karobaar   Men   Ham  Nay

Jaan    Day    Kar    Barri    Kamaai   Ki

Poet: Rahat    Indori

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -