میرے مرنے کی خبر ہے اُس کو|راحت اندوری |

میرے مرنے کی خبر ہے اُس کو|راحت اندوری |
میرے مرنے کی خبر ہے اُس کو|راحت اندوری |

  

میرے مرنے کی خبر ہے اُس کو

جانے کس بات کا ڈر ہے اُس کو

بند رکھتا ہے وہ آنکھیں اپنی

شام کی طرح سحر ہے اُس کو

میں کسی سے بھی ملوں ، کچھ بھی کروں

میری نیت کی خبر ہے اُس کو

بھول جانا بھی اُسے سہل نہیں

یا درکھنا بھی ہنر ہے اُس کو

منزلیں ساتھ لیے پھرتا ہے

کتنا دشوار سفر ہے اُس کو

اب وہ پہلا سا نظر آتا نہیں

ایسا لگتا ہے نظر ہے اُس کو

شاعر: راحت اندوری

(شعری مجموعہ" ل٘محے لمحے":سال اشاعت؛2002  )

Meray   Marnay   Ki   Khabar   Hay    Uss   Ko

Jaanay   Kiss    Baat   Ka   Dar   Hay    Uss   Ko

Band   Rakhta   Hay Wo    Aankhen   Apni

Shaam   Ki   Tarah   Sahar   Hay    Uss   Ko

Main   Kisi   Say   Bhi   Milun   ,  Kuch    Bhi   Karun

Meri    Niyyat    Ki    Khabr   Hay    Uss   Ko

Bhool   Jaana   Bhi    Usay  Sahall   Nahen

Yaad   Rakhna    Bhi    Hunar   Hay    Uss   Ko

Manzlen   Saath   Liay   Phirta   Hay

Kitna   Dushwaar   Safar    Hay    Uss   Ko

Ab   Wo    Pehla   Sa    Nazar   Aata   Nehen

Aisa   Lagta    Hay   Nazar   Hay    Uss   Ko

Poer: Rahat    Indori

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -