ہاتھ خالی ہیں ترے شہر سے جاتے جاتے |راحت اندوری |

ہاتھ خالی ہیں ترے شہر سے جاتے جاتے |راحت اندوری |
ہاتھ خالی ہیں ترے شہر سے جاتے جاتے |راحت اندوری |

  

ہاتھ خالی ہیں ترے شہر سے جاتے جاتے 

جان ہوتی تو مری جان لٹاتے جاتے 

اب تو ہر ہاتھ کا پتھر ہمیں پہچانتا ہے 

عمر گزری ہے ترے شہر میں آتے جاتے 

اب کے مایوس ہوا یاروں کو رخصت کر کے 

جا رہے تھے تو کوئی زخم لگاتے جاتے 

رینگنے کی بھی اجازت نہیں ہم کو ورنہ 

ہم جدھر جاتے نئے پھول کھلاتے جاتے 

میں تو جلتے ہوئے صحراؤں کا اک پتھر تھا 

تم تو دریا تھے مری پیاس بجھاتے جاتے 

مجھ کو رونے کا سلیقہ بھی نہیں ہے شاید 

لوگ ہنستے ہیں مجھے دیکھ کے آتے جاتے 

ہم سے پہلے بھی مسافر کئی گزرے ہوں گے 

کم سے کم راہ کے پتھر تو ہٹاتے جاتے 

شاعر: راحت اندوری

(شعری مجموعہ" ل٘محے لمحے":سال اشاعت؛2002  )

Haath    Khaali   Hen   Tiray   Shehr   Say   Jaatay   Jaatay

Jaan   Hoti To   Miri   Jaan   Lutaatay   Jaatay

Ab    To   Har    Haath   Ka   Pather   Hamen   Pehchaanta   Hay

Umr   Guzri   Hay   Tiray   Shehr   Men   Aatay   Jaatay

Ab   K   Mayoos   Hua   Yaaron   Ko   Rukhsat   Kar   K

Ja   Rahay    Thay   To   Koi     Zakhm    Lagaatay   Jaatay

Reengnay   Ki    Bhi    Ijazayt     Nahen    Ham    Ko   Warna

Ham   Jidhar   Jaatay     Naey   Phool    Khilaatay   Jaatay

Main    To    Jaltay    Huay    Sehraaon   Ka    Ik   Pathar  Tha

Tum   To    Darya    Thay    Miri    Piyaas    Bujhaatay   Jaatay

Mujh   Ko    Ronay    Ka    Saleeqa    Bhi    Nahen   Hay   Shayad

Log   Hanstay   Hen    Mujhay   Dekh    K    Aatay   Jaatay

Ham   Say    Pehlay   Bhi     Mussaafir   Kai    Guzray   Hon   Gay

Kam   Say    Kam    Raah  K   Pathar   To   Hataatay   Jaatay

Poet: Rahat    Indori

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -