یادوں کے دریچوں کو ذرا کھول کے دیکھو | رام ریاض |

یادوں کے دریچوں کو ذرا کھول کے دیکھو | رام ریاض |
یادوں کے دریچوں کو ذرا کھول کے دیکھو | رام ریاض |

  

یادوں کے دریچوں کو ذرا کھول کے دیکھو 

ہم لوگ وہی ہیں کہ نہیں بول کے دیکھو 

ہم اوس کے قطرے ہیں کہ بکھرے ہوئے موتی 

دھوکا نظر آئے تو ہمیں رول کے دیکھو 

کانوں میں پڑی دیر تلک گونج رہے گی 

خاموش چٹانوں سے کبھی بول کے دیکھو 

ذرے ہیں مگر کم نہیں پاؤ گے کسی سے 

پھر جانچ کے دیکھو ہمیں پھر تول کے دیکھو 

سقراط سے انسان ابھی ہیں کہ نہیں رامؔ 

تھوڑا سا کبھی جام میں بِس گھول کے دیکھو 

شاعر: رام ریاض

(شعری مجموعہ" پیڑ اور پتے":سال اشاعت؛بارِ دوم،2002  )

Yaadon    K    Dareechon   Ko    Zara   Khol   K   Dekho

Ham   Log   Wahi    Hen    Keh    Nahen  ,   Bol   K    Dekho

Ham   Aos   K   Qatray    Hen    Keh     Bikhray     Huay   Moti

Dhoka    Nazar   Aaey    To  Hamhen   Rol   K   Dekho

Kaanon    Men    Barri    Der   Talak     Goonj    Rahay   Gi

Khamosh    Chattaanom    Say   Kabi     Bol    K   Dekho

Zarray    Hen   ,    Magar    Kam     Nahen    Paao    Gay    Kisi   Say

Phir    Jaanch    K    Dekho    Hamen    Phir    Tol   K   Dekho

Suqraat    K    Insaan    Abhi    Hen    Keh    Nahen     RAM

Thorra    Sa    Kabhi    Jaam    Men    Biss   Ghol    K   Dekho

Poet: Ram   Riaz 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -