دھرنے ہوں گے تو کنٹینرز تو لگیں گے، اسلام آباد میں راستے بلاک کرنے کیخلاف درخواست پر جسٹس محسن اختر کے ریمارکس

دھرنے ہوں گے تو کنٹینرز تو لگیں گے، اسلام آباد میں راستے بلاک کرنے کیخلاف ...
دھرنے ہوں گے تو کنٹینرز تو لگیں گے، اسلام آباد میں راستے بلاک کرنے کیخلاف درخواست پر جسٹس محسن اختر کے ریمارکس

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن )وفاقی دارالحکومت میں کنٹینرز رکھ کرراستے بلاک کرنے کے خلاف درخواست پر اسلام آباد ہائیکورٹ میں سماعت ہوئی ، ملک صالح محمد ایڈووکیٹ کی درخواست پر جسٹس محسن اختر کیانی نے سماعت کرتے ہوئے کہا کہ

دھرنے ہوں گے تو یہ تو ہوگا، سیاسی جماعتیں پریشر گروپ بنی ہوتی ہیں، ملک یرغمال بنایا ہوتا ہے ۔

نجی ٹی وی "جیو نیوز "کے مطابق اسلام آباد ہائیکورٹ میں ایکسپریس وے کو کنٹینرز  لگا بلاک کرنے کیخلاف درخواست پر سماعت ہوئی  درخواست گزار کے مطابق راستے بلاک ہونے سے لوگوں کو دشواری  ہو رہی ہے، جس پر جسٹس محسن اختر کیانی نے سوال  کیا کہ احتجاج کے دوران ٹریفک ریگولیٹ ہو رہی ہے نا؟ درخواست گزار  نے کہا کہ کسانوں کا مارچ روکنے کیلئے ایسا کیا گیابنیادی حقوق سلاب ہو رہے ہیں، جس پر جسٹس محسن اختر کیانی نے کہا کہ دھرنے ہوں گے تو یہ تو ہوگا، سیاسی جماعتیں پریشر گروپ بنی ہوتی ہیں، ملک یرغمال بنایا ہوتا ہے، اب کوئی تجویز لائیں کی کیا کیا جائے ، جس پر درخواست گزار وکیل نےکہا کہ پریڈ گراؤنڈکو احتجاجی جلسوں اوردھڑنوں کیلئے مختص کر دیا جائے ،  جج نے کہا کہ پریڈ گراؤنڈ کیوں ؟ ایف ایٹ کچہری کو کیوں نہ مختص کر دیں؟ 

دوران سماعت وکیل کی جانب سے عالی جاہ کہنے پر عدالت برہم  ہو ئی ، جسٹس محسن اختر نے کہا کہ میں جج ہوں مجھے عالی جاہ لفظ سے سخت چڑ ہے ، دھرنوں سے متعلق فیصلے آچکے ہیں، ان کو پڑھ کر آئیں ۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -