ایل پی جی کی غیر قانونی فلنگ کا دھندہ عروج پر، منی پٹرول پمپوں کی بھرمار

ایل پی جی کی غیر قانونی فلنگ کا دھندہ عروج پر، منی پٹرول پمپوں کی بھرمار

  

لاہور ( لیاقت کھرل) صوبائی دارالحکومت میں ایل پی جی کی غیر قانونی فلنگ اور کھلے عام پٹرول کی بڑے پیمانے پر فروخت ایک بار پھر شرع، ایل پی جی کی غیر قانونی فلنگ پر حادثات کے خطرات نے جنم لے لیا، جبکہ منی پٹرول پمپوں کی بھرمار ہو کر رہ گئی ہے تفصیلات کے مطابق شہر کی اہم شاہراؤں سمیت گلی محلوں میں ایل پی جی گیس کی غیرقانونی فلنگ نے زور پکڑ لیا ہے ضلعی حکومت کی جانب سے کی جانے والی کارروائی محض ’’خانہ پری‘‘ کے طور پر سامنے آئی ہے جبکہ اس حوالے سے ضلعی حکام کا کہنا ہے کہ ایل پی جی گیس کی غیر قانونی فلنگ اور منی پٹرول پمپوں کے خلاف روزانہ کی بنیاد پر چھاپے مارے جا رہے ہیں، جس میں گزشتہ روز ڈی سی او کیپٹن (ر) محمد عثمان کی ہدایت پر شفیق آباد اور لوئر مال کے علاقوں میں ایل پی جی شاپ اور کھلے عام پٹرول فروخت کرنے والوں کے خلاف کارروائی کی گئی ہے ڈی سی اولاہور نے بتایا کہ ضلعی حکومت کے محکمہ سول ڈیفنس کی ٹیم نے شفیق آبا د اور لوئر مال کے علاقوں میں کارروائی کرتے ہوئے کھلے عام پٹرول فروخت کرنے اور غیر قانونی طور پر ایل پی جی گیس کی فلنگ کرنے پر 8دکانوں کو سیل کر دیا اور ان کے مالکان کے خلاف مقدمات درج کروا کر اُنہیں گرفتار کروا دیا ہے تفصیل کے مطابق شفیق آباد کے علاقے میں کارروائی کرتے ہوئے کھلے عام پٹرول فروخت کرنے پر 2دکانوں کو سیل کر دیا ہے اور اُن کے مالکان کے خلاف تھانہ شفیق آباد میں مقدمات درج کروا کر اُنہیں گرفتار کروادیاہے اسی طرح لوئر مال میں کارروائی کرتے ہوئے کھلے عام پٹرول فروخت کرنے پر 4دکانوں کو اور غیر قانونی طور پر ایل پی جی گیس کی فلنگ کرنے پر2دکانوں کو سیل کر دیا اور اُن کے مالکان کے خلاف تھانہ لوئر مال میں مقدمات درج کروا کر اُنہیں گرفتا ر کروادیا ہے۔گرفتار ہونے والوں میں محمد خان،صادق علی، مشتاق احمد، سکندر علی، سکبر خان، لیاقت، خالد محمود اور محمد آصف شامل ہے۔ڈی سی او کے مطابق اس حوالے سے روزانہ کی بنیاد پر چھاپوں کا حکم دے رکھا ہے جس میں شہری دفاع سول ڈیفنس اور ضلعی حکومت کی الگ الگ ٹیمیں چھاپے مار رہی ہیں اور اگلے دس دنوں تک شہر بھر سے ایل پی جی کی غیر قانونی فلنگ اور منی پٹرول پمپوں کے اڈے ختم کر دئیے جائیں گے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -