دھرنے وزیر اعظم ہاﺅس کے سامنے لے جانے کی کوشش ناکام

دھرنے وزیر اعظم ہاﺅس کے سامنے لے جانے کی کوشش ناکام

  

                            اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک + ایجنسیاں) پاکستان تحریک انصاف اور عوامی تحریک کی دھرنوں کو وزیراعظم ہاﺅس کے سامنے منتقل کرنے کو شش ناکام بنادی گئی۔ گزشتہ روز طاہرالقادری اور عمران خان کی طرف سے دھرنوں کو وزیراعظم ہاﺅس کے سامنے منتقل کرنے کا اعلان کردیا جس پر ڈنڈا بردار کارکنوں نے وزیراعظم ہاﺅس کی طرف بڑھنا شروع کردیا۔ پہلے تو پولیس نے مظاہرین کو راستہ دے دیا اور کارکن کرین کی مدد سے کنٹینر ہٹاتے ہوئے آگے بڑھتے رہے مگر جونہی مظاہرین ایوان صدر کے گیٹ پر پہنچے اور اس گیٹ کو کرین کی مددسے توڑنے کی کوشش کی تو ایف سی نے آنسو گیس کی شیلنگ شروع کردی جسکے باعث مظاہرین نے واپس بھاگنا شروع کردیا۔ پولیس نے آنسو گیس کی شیلنگ شروع کردی جس سے مظاہرین مزید پیچھے ہٹ گئے اور ایوان صدر راستہ خالی ہوگیا۔ کرین کے ڈرائیور کو گرفتار کرکے کرین کو قبضے میں لے لیا گیا۔ رات گئے تک پولیس اور مظاہرین کے درمیان جھڑپیں جاری تھیں۔ ادھر عمران خان نے اعلان کیا ہے کہ ہم ہر صورت وزیراعظم ہاﺅس کے سامنے پہنچیں گے۔ تفصیل کے مطابق تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان اور عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری نے کل شام اپنے اپنے دھرنوں کے شرکاءسے خطاب کرتے ہوئے اعلان کیا کہ کچھ دیر بعد دونوں دھرنوں کو وزیراعظم ہاﺅس کے سامنے منتقل کیا جارہا ہے۔ دونوں رہنماﺅں نے اپنے حامیوںکا حوصلہ بڑھانے کے لئے زور دار تقریریں کیں جس کے بعد لوگ وزیراعظم ہاﺅس کی طرف چل پڑے۔ اگرچہ دونوں قائدین نے اعلان کیا کہ ان کے کارکن وزیراعظم ہاﺅس جاتے ہوئے پرامن رہیں گے لیکن جب یہ لوگ دھرنوں کی جگہوں سے روانہ ہوئے تو ان کا اندازہ جارحانہ ہوگیا اور انہوں نے راستے میں آنے والی رکاوٹیں ہٹادیں جن میں کنٹینرز بھی شامل تھے۔دریں اثناءرات گئے تک ریڈ زون کا علاقہ پولیس اور مظاہرین کے درمیان میدان جنگ بنا رہا۔ آئی جی پولیس نے علاقے کا محاصرہ کرکے دھرنے کے شرکاءکو گرفتار کرنے کا حکم دے دیا۔ حکومتی ترجمان کے مطابق وزیراعظم ہاﺅس اور کیبنٹ ڈویژن کا علاقہ اور پاک سیکرٹریٹ کے علاقے کو مظاہرین سے خالی کرالیا گیا۔ متعدد افراد کو گرفتار کرلیا گیا جبکہ 82 افراد زخمی ہوگئے جن میں سے متعدد بے ہوش تھے زخمیوں میں سے کئی کو ربڑ کی گولیاں لگی ہیں۔ دریں اثناءمظاہرین نے ریڈزون میں موجود جھاڑیوں اور دھرنے کی جگہ پر موجود کرسیوں کو آگ لگادی۔ شہر کے تمام پٹرول پمپ بند کردئیے گئے ہیں۔ رات گئے وزیر داخلہ چودھری نثار ریڈ زون پہنچ گئے اور صورتحال کا جائزہ لیا۔ وزیر داخلہ کا کہنا تھا کہ دھرنے کے شرکاءمیں مسلح افراد موجود تھے جو وزیراعظم ہاﺅس اور دوسری عمارتوں پر قبضہ کرنا چاہتے تھے۔ جھڑپوں میں 4 پولیس اہلکار بھی زخمی ہوگئے۔ دوسری طرف عمران نے ملک بھر میں احتجاج کا اعلان کردیا ہے جبکہ تحریک انصاف سندھ نے آج ملک بھر میں یوم سوگ کا اعلان کردیا ہے اور کراچی میں بھی ہڑتال کا اعلان کیا ہے۔ دریں اثناءرات گئے مظاہرین ٹرک کے ذریعے پارلیمنٹ ہاﺅس کا جنگلہ توڑ کر اندر داخل ہوگئے۔ تحریک انصاف اور عوامی تحریک کی قیادت کی طرف سے کارکنوں کا حوصلہ بڑھایا جاتا رہا اور ہر صورت عمارتوں میں داخل ہونے کی ہدایت دی جاتی رہی۔

مزید :

صفحہ اول -