پانچ ملزمان بری، تفصیلی فیصلہ پڑھنے کے بعد ہم اپیل میں جاسکتے ہیں: ایف آئی اے پراسیکیوٹرخواجہ امتیاز

پانچ ملزمان بری، تفصیلی فیصلہ پڑھنے کے بعد ہم اپیل میں جاسکتے ہیں: ایف آئی اے ...
پانچ ملزمان بری، تفصیلی فیصلہ پڑھنے کے بعد ہم اپیل میں جاسکتے ہیں: ایف آئی اے پراسیکیوٹرخواجہ امتیاز

  


راولپنڈی (ڈیلی پاکستان آن لائن) بے نظیر قتل کیس کافیصلہ سنادیاگیا جس کے مطابق دونوں پولیس افسران کو ذمہ دارقراردیتے ہوئے قیداور جرمانے کی سزاسنادی گئی جبکہ سابق فوجی صدر پرویز مشرف کو اشتہاری قراردیاگیا، مقدمے میں گرفتار پانچ ملزمان کو عدالت نے بری کردیا۔

فیصلے کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ایف آئی اے کے پراسیکیوٹر خواجہ امتیاز نے کہاہے کہ یہ عدالتی فیصلہ ہے ، ابتدائی طورپر زیادہ تو کچھ نہیں کہہ سکتے لیکن جوملزم بری ہوئے ہیں ، ان سے موبائل فون اور دیگر چیزیں ملی تھیں ، یہ بھی ثابت ہوگیا تھاکہ وہ موقع پر موجود تھے ، ان کیخلاف کیس مضبوط تھا ، تفصیلی فیصلہ پڑھنے کے بعد ہم ملزمان کی بریت کیخلاف اپیل میں جاسکتے ہیں۔ اُنہوں نے بتایاکہ پولیس افسران نے کرائم کسین کو ایک گھنٹہ چالیس منٹ بعد دھودیا، فائرنگ کے بعد ہونیوالے دھماکے میں 22افراد جاں بحق اور 70زخمی ہوگئے تھے جس کے بعد شواہد کو محفوظ رکھنا تھا ۔

بے نظیر قتل کیس میں پرویز مشرف اشتہاری قرار ،ڈی آئی جی سعود عزیزاورایس پی راول ٹائون خرم شہزاد کو 17،17سال قید کا حکم

یادرہے کہ بے نظیر بھٹو قتل کیس کی سماعت 29فروری 2008ءکو شروع ہوئی تھی اور سی ٹی ڈی پنجاب نے بری ہونیوالے ملزموں کو گرفتار کیاتھا لیکن نوسال آٹھ ماہ اور تین دن بعد فیصلہ سنادیاگیا۔

مزید : راولپنڈی