پیر جماعت علی شاہ عظیم روحانی پیشوا اور مجدد تھے،جسٹس(ر) نذیر اختر

پیر جماعت علی شاہ عظیم روحانی پیشوا اور مجدد تھے،جسٹس(ر) نذیر اختر

  

لاہور(جنرل رپورٹر) امیر ملت حضرت پیر سید جماعت علی شاہ ؒ ایک عظیم روحانی پیشوا‘ مجدد اور مصلح تھے۔ انہوں نے اپنی زندگی دین اسلام کیلئے وقف کر رکھی تھی۔ آپ کے انقلابی فکر و عمل نے برصغیر کے مسلمانوں میں حریت فکر بیدار کر دی۔ تحریک پاکستان کے دوران امیر ملتؒ نے قائداعظمؒ اور مسلم لیگ کا بھرپور ساتھ دیا۔ ان خیالات کااظہار جسٹس (ر) میاں نذیر اختر نے ایوان کارکنان تحریک پاکستان ، لاہور میں امیر ملت پیر سید جماعت علی شاہؒ کی یاد میں منعقدہ خصوصی نشست کے دوران کیا ۔ نشست کا اہتمام تحریک پاکستان ورکرز ٹرسٹ کے اشتراک سے کیا گیا ۔ پروگرام کا باقاعدہ آغاز تلاوت کلام پاک ،نعت رسول مقبولؐ اور قومی ترانہ سے ہوا۔ پروگرام کی نظامت کے فرائض عثمان احمد نے انجام دیے۔ جسٹس (ر) میاں نذیر اختر نے کہا کہ حضرت پیر سید جماعت علی شاہ محدث علی پوریؒ اور ان کے مریدین نے تحریک پاکستان میں انتہائی فعال کردار ادا کیا۔ آپ کی شخصیت شریعت و طریقت کا حسین امتزاج تھی۔آپ کی زندگی جہد مسلسل سے عبارت تھی۔ آپ نے دین اسلام کی تبلیغ و اشاعت کے سلسلے میں برصغیر کے دور افتادہ علاقوں کا سفر کیا۔ تحریک خلافت‘ تحریک آزادئ کشمیر اور تحریک مسجد شہید گنج میں قائدانہ کردار ادا کیا۔ فتنۂ ارتداد‘ شدھی تحریک اور فتنۂ قادیانیت کی سرکوبی کیلئے بھی آپ نے کلیدی کردار ادا کیا۔ بابائے قوم قائداعظم محمد علی جناحؒ نے جب 1936ء میں مسلم لیگ کی تنظیم نو کا بیڑا اٹھایا اور مسلمانوں کے علیحدہ اسلامی تشخص کے لیے آواز بلند کی تو انہوں نے قائداعظمؒ کو اپنے بھرپور تعاون کا یقین دلایا۔ آپ کو تحریک قیام پاکستان سے قلبی وابستگی تھی۔ آپ نے اپنے صاحبزادگان‘ خلفاء اور مریدوں کو حکم دیا کہ وہ پوری یکسوئی سے مسلم لیگ کی حمایت کریں‘ اس کی رکنیت حاصل کریں اور قائداعظمؒ کے سپاہی بن کر مسلم لیگ کو ہر دل کی دھڑکن بنا دیں۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -