مٹہ ، ڈاکٹروں کا گورنمنٹ پرائمری سکول کے کلاس فور ملازم پر مبینہ تشدد

مٹہ ، ڈاکٹروں کا گورنمنٹ پرائمری سکول کے کلاس فور ملازم پر مبینہ تشدد

  

مٹہ(نمائندہ پاکستان)تحصیل مٹہ کے نواحی گاوں دارمئی میں مقامی ہسپتال کے ڈاکٹروں کا گورنمنٹ پرائمری سکول کے کلاس فور ملازم پر مبینہ تشدد،تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز مٹہ کے نواحی گاوں دارمئی میں مقامی ہسپتال کے ڈاکٹروں نے گورنمنٹ پرائمری سکول دارمئی کے کلاس فور ملازم جس کا نام اعجاز حسین سکنہ لالکوہے کو لاٹھیوں،لاتھوں اور مکوں کے ذریعے تشدد کا نشانہ بنایا۔میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کلاس فور ملازم اعجاز احمد کا کہنا تھا کہ میں سکول میں موجود تھا جب مقامی ہسپتال کے دو ڈاکٹرز جاوید عالم سکنہ کانجو اور ڈاکٹر عمران سکنہ لنڈے سکول میں داخل ہوئے اور مجھے تشدد کا نشانہ بنا ڈالا۔اعجاز حسین کا کہنا تھا کہ میں نے ان ڈاکٹروں سے کہا تھا کہ اپ لوگ ہمیں سرکاری دوائیاں نہیں دیتے اور ان دوائیوں کو اپ لوگ اپنے پرایؤیٹ کلینکس میں عوام پرمہنگے داموں فروخت کرتے ہو۔جس کے بناء پر ان لوگوں نے مجھے تشدد کا نشانہ بنایا۔اسکے علاوہ ان ڈاکٹروں نے مجھ پر الزام لگایا کہ تم ہسپتال میں لیڈی ڈاکٹر(ف)کیلئے آتے ہوں اور بے وقت آتے ہوں۔اس کے بعد میں نے لنڈے تھانہ میں رپورٹ درج کردیا۔اس موقع پر ویلج ناظم لالکو قیوم بھی موجود تھے جنہوں نے وزیر اعلی KPKمحمود خان،عبداللہ خان اور دیگر سرکاری اداروں سے پرزور مطالبہ کیا کہ وہ اس معاملے کا از خود انکوائری کرکے ان ڈاکٹروں کو نوکریوں سے فارغ کردیں بصورت دیگر ہم خود اس نوجوان کو انصاف فراہم کرنے کیلئے احتجاج پر مجبور ہوکر سڑکوں پر نکل ائے گے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -