A PHP Error was encountered

Severity: Notice

Message: Undefined offset: 0

Filename: frontend_ver3/Sanitization.php

Line Number: 1246

Error

A PHP Error was encountered

Severity: Notice

Message: Undefined offset: 2

Filename: frontend_ver3/Sanitization.php

Line Number: 1246

کی بورڈ پر ٹائپنگ کی رفتار آپ کی صحت کے بارے میں کیا کہتی ہے؟ سائنسدانوں کا وہ انکشاف جو آپ کو ضرور معلوم ہونا چاہیے

کی بورڈ پر ٹائپنگ کی رفتار آپ کی صحت کے بارے میں کیا کہتی ہے؟ سائنسدانوں کا وہ انکشاف جو آپ کو ضرور معلوم ہونا چاہیے

Aug 31, 2018 | 15:43:PM

کنبرا(مانیٹرنگ ڈیسک) ٹائپنگ سپیڈ اچھی ہونے کا ایک فائدہ تو یہ ہے کہ آدمی کم وقت میں زیادہ مواد ٹائپ کر سکتا ہے اور کمپیوٹر کے استعمال میں آسانی رہتی ہے لیکن اب سائنسدانوں نے ٹائپنگ سپیڈ کے صحت سے ایک ایسے تعلق کا انکشاف کر دیا ہے کہ سن کر آپ دنگ رہ جائیں گے۔ میل آن لائن کے مطابق آسٹریلیا کے سائنسدانوں نے نئی تحقیق میں بتایا ہے کہ ٹائپنگ سپیڈ انسان میں پارکنسنز کی بیماری لاحق ہونے کے امکانات کی بھی غمازی کرتی ہے۔ جس شخص کی ٹائپنگ سپیڈ کم ہو اور کی بورڈ پر انگلیاں چلانے میں دقت محسوس کرتا ہو اس کو یہ بیماری لاحق ہونے کا خطرہ بہت زیادہ ہوتا ہے۔

پارکنسز کی بیماری ایک اعضابی کمزوری سے متعلق عارضہ ہے جس میں انسان کے اعصابی خلیے بتدریج کمزور پڑتے جاتے ہیں، انسانی اعضاء میں رعشہ اور بافتوں میں سختی آتی جاتی ہے اور بالآخر اعضاء حرکت کرنے کے قابل نہیں رہتے۔ چونکہ کی بورڈ پر انگلیوں کا سست روی سے چلنا بھی اعصابی کمزوری کی علامت ہے چنانچہ اسے پارکنسنز کی علامت بھی خیال کیا جا سکتا ہے۔ آسٹریلوی ریاست کوئنزلینڈ کی چارلس سٹورٹ یونیورسٹی کے سائنسدانوں نے اس تحقیق میں 76 لوگوں پر تجربات کیے نتائج میں معلوم ہوا کہ ان میں سے 27کو پارکنسز لاحق تھی۔ ان میں 80فیصد کیسز میں انتہائی درستگی کے ساتھ ٹائپنگ سپیڈ کے ذریعے ان افرادمیں پارکنسز کی موجودگی کا پتہ چلایا گیا۔

تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ واروک ایڈمز کا کہنا تھا کہ ’’اس تحقیق کے لیے ہم نے ان لوگوں کے گھر کے کمپیوٹروں میں ایک پروگرام انسٹال کیا جو بتاتا تھا کہ کی بورڈ پر ان کی انگلیاں کس رفتار سے چل رہی ہیں۔ اس کے بعد 9ماہ تک ان لوگوں کی ٹائپنگ پر نظر رکھی گئی اور معلوم کرنے کی کوشش کی گئی کہ ان کے انگلیاں ٹائپ کرتے ہوئے کتنی لغزش کھاتی ہیں۔جن لوگوں کی انگلیوں میں 4سے 6ہرٹز تک لرزش تھی ان میں سے 80فیصد افراد میں پارکنسز کی موجودگی کی تصدیق ہوئی۔ اس سے کم لرزش والوں میں بیماری موجود نہیں تھی۔‘‘

مزیدخبریں