2سالہ بچے کا اغوا ، پھر کیا چیز ڈھونڈنے کے لیے اُس کو ذبح کر دیا گیا؟ جان کر ہی انسان کانپ اُٹھے

2سالہ بچے کا اغوا ، پھر کیا چیز ڈھونڈنے کے لیے اُس کو ذبح کر دیا گیا؟ جان کر ہی ...
2سالہ بچے کا اغوا ، پھر کیا چیز ڈھونڈنے کے لیے اُس کو ذبح کر دیا گیا؟ جان کر ہی انسان کانپ اُٹھے

  

چندراپور(نیوز ڈیسک)ایک جانب بھارت دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت ہے، اس کی معیشت حیران کن ترقی کر رہی ہے، اور یہ خطے کی بڑی فوجی قوت بھی ہے، مگر دوسری جانب وہ لرزہ خیز سچائی ہے کہ جس سے جب جب پردہ اٹھا ہے انسانیت کا سر شرم سے جھک گیا ہے۔ بھلا آپ تصور کر سکتے ہیں کہ آج کے دور میں بھی کسی معاشرے میں جہالت کا یہ عالم ہو گا کہ لوگ انسانی قربانی پر یقین رکھتے ہوں، صرف یقین ہی نہیں اس بھیانک نظریے پر عمل بھی کر گزرتے ہوں؟ یہ بھارت ہی ہے جہاں آج بھی یہ حیوانیت پوری آب و تاب کے ساتھ موجود ہے۔

ٹائمز آف انڈیا کے مطابق برہمہ پوری تحصیل سے چند دن قبل ایک کمسن بچہ لاپتہ ہو گیا تھا، اور اب پتا چلا ہے کہ اسے سفاک ہمسائے نے اغواء کرنے کے بعد جادو ٹونے کے عملیات کے دوران قربانی پیش کرنے کے لئے قتل کر ڈالا۔ دو سالہ یُگ میشرم 22 اگست کے روز لاپتہ ہوا اور ہر جگہ اس کی تلاش کی جا رہی تھی، مگر یہ تو کسی نے سوچا بھی نہیں تھا کہ اُس کے گھر سے چند فٹ کی دوری پر بھوسے کے ڈھیر میں اس کی ننھی لاش دبی ہوئی تھی۔

پولیس کا کہنا ہے کہ واقعے کی تفتیش کے دوران بچے کے ہمسائے سنیل بانکر پر کچھ شک گزرا تو اسے حراست میں لے کر تفتیش کی گئی۔ اس بدبخت نے اعتراف کر لیا کہ وہ خزانے کی تلاش کے لئے جادو ٹونہ کر رہا تھا جس کے لئے ایک بچے کی قربانی کی ضرورت تھی۔ اُس نے اپنے ایک دوست پرمود بانکر کے ساتھ ملکر ہمسائے کے کمسن بچے کو اغواء کیا اور پھر رات کی تاریکی میں گاؤں سے باہر لے جا کر عملیات کے دوران اسے قتل کر ڈالا۔ یہ درندے بچے کی لاش کو دریا میں پھینکنا چاہتے تھے مگر سورج طلوع ہو جانے کے باعث اپنے ساتھ لے آئے اور سنیل کے گھر میں بھوسے کے ڈھیر میں اسے دبا دیا۔

ملزمان کی نشاندہی پر بچے کی لاش برآمد کی گئی تو یہ بُری طرح گل سڑ رہی تھی اور کیڑے مکوڑے جسم کے اندرونی اعضاء کا گوشت نوچ رہے تھے۔ اپنے لخت جگر کو اس حال میں دیکھ کر بیچارے والدین نیم پاگل ہو چکے ہیں اور دور دور کے دیہاتوں تک اس سانحے کے باعث سوگ اور دہشت کا سماں ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -